سعودی تخلیق کار کی قطر کے ’’سٹارز آف سائنس‘‘ پروگرام میں شرکت کی تیاری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سعودی روبوٹکس ٹیم کے رکن اور قطر کے سائنس اور ٹیکنالوجی پارک میں قائم سٹارز آف سائنس پروگرام میں سعودی عرب کے واحد نمائندے کے طور پر انجینئر محمد البومجداد چوتھے مرحلے کے کوالیفائر میں حصہ لینے کی تیاری کر رہے ہیں۔ یہ مشرق وسطیٰ میں اپنی نوعیت کے پہلا اور اہم ترین پروگرام ہے۔ اس میں ایجادات کا مقابلہ کیا جاتا ہے۔ پروگرام میں 3 ہزار سے زیادہ اختراعات پیش کی جائیں گی۔ انہیں ایجادات میں سعودی انجینئر کا عمودی سطح پرچڑھنے والا روبوٹ بھی شامل ہے۔

البومجداد نے اس پروگرام میں شریک اپنی اختراع کے بارے میں اپنی گفتگو میں وضاحت کی کہ یہ اختراع "ایک روبوٹ ہے جو عمودی سطحوں پر چڑھ جاتا ہے"۔ اس روبوٹ نے مقابلوں میں جیوری کے سامنے پیش کیے جانے کے بعد کوالیفائی کیا ہے۔ روبوٹ کو تیار ہونے میں 3 سال لگے ہیں۔ آخر جب تک یہ عمودی سطحوں پر چڑھنے کے قابل نہ ہوگیا اسے مکمل نہیں کیا گیا۔

یہ روبوٹ انسانوں کے لیے خطرناک ثابت ہونے والے کاموں کو انجام دینے کے لیے بنایا گیا ہے۔ ان کاموں میں معائنہ اور دیکھ بھال جیسی خدمات بھی شامل ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ پروگرام کے کوالیفائنگ مراحل فی الحال ٹیلی ویژن پر ہر جمعہ کو رات 9 بجے سے قطر کے سیٹلائٹ چینلز، عمان سیٹلائٹ چینل، الرای سیٹلائٹ چینل، الرویا سیٹلائٹ چینل، السماریہ سیٹلائٹ چینل، یوٹیوب چینل اور دیگر پر نشر کیے جا رہے ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ کوالیفائنگ کے مراحل میں بہترین 100 پروجیکٹس، بہترین 20 پروجیکٹس اور بہترین 6 پروجیکٹس سے کا انتخاب کیا گیا اور اب اس مرحلہ میں آخری چھ افراد کے درمیان مقابلہ ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ فائنلسٹ کا اعلان 13 اکتوبر کو چھٹی ایپی سوڈ میں کیا جائے گا اور اگر وہ فائنل مرحلے کے لیے کوالیفائی کرتے ہیں تو فاتح کا انتخاب سامعین کی ووٹنگ کے ذریعے کیا جائے گا۔ یہ ووٹنگ پورے ایک ہفتے تک جاری رہتی ہے۔ پروگرام جیتنے کے چار مراحل ہیں۔ انجینئرنگ کا مرحلہ، پھر ڈیزائن کا مرحلہ، پھر آخری مرحلہ جس کا فیصلہ ووٹنگ سے ہوتا ہے۔

یہ پروگرام اپنے 15ویں ایڈیشن میں اور قطر فاؤنڈیشن کے اقدامات میں سے ایک ہے۔ پروگرام کا مقصد تخلیقی خیالات کو مصنوعات میں تبدیل کرنا اور عرب اختراع کاروں کو جدید تکنیکی اقدامات کو ٹھوس حلوں میں تیار کرنے کے قابل بنانا۔

انجینئر البومجداد نے کنگ فہد یونیورسٹی آف پیٹرولیم اینڈ منرلز میں مکینیکل انجینئرنگ کی تعلیم حاصل کی اور روبوٹکس اور انٹیلیجنٹ سسٹمز انجینئرنگ میں ماسٹرز کیا ہے۔ پروگرام کے مقابلوں کے تین ابتدائی راؤنڈز میں حصہ لینے کے بعد انہوں نے چوتھے راؤنڈ کے لیے کوالیفائی کرلیا ہے۔

واضح رہے ’’ سٹارز آف سائنس‘‘پروگرام نے 2009 میں اپنے آغاز کے بعد سے کمیونٹیز کے لیے تکنیکی حل کی ترقی میں اپنا واضح حصہ ڈالا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں