تبوک میں سالانہ 28 ملین سے زیادہ گلاب اپنی خوشبو بکھیرتے ہیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سعودی عرب کے علاقے تبوک میں محکمہ زراعت مملکت کے وژن 2030 کے اہداف کے حصول میں برق رفتاری سے آگے بڑھ رہا ہے۔

محکمہ زراعت کاشت کاری کے شعبے کو آگے بڑھانے کے لیے ماحولیات، پانی اور زراعت کی وزارت کی طرف سے تیار کردہ حکمت عملیوں اور پروگراموں کے تحت غذائی تحفظ اور پائیدار زرعی ترقی کے حصول کا خواہاں ہے۔

تبوک کے علاقے کو زرعی پائیداری میں جو چیز ممتاز کرتی ہے وہ یہ ہے کہ یہ سالانہ گلاب کی مختلف اقسام کے 28 ملین سے زیادہ پھول پیدا کرتا ہے۔

اس کی مارکیٹ ویلیو 32 ملین ریال سے زیادہ ہے۔ اس طرح یہ گلاب کی پیداوار اور برآمد میں اپنی قیادت کو برقرار رکھتا ہے۔ تبوک میں گلاب کی 17 سے زیادہ اقسام کاشت کی جاتی ہیں۔ ان میں سے سب سے مشہور لونگ، گلاب، جپسوفلا، ایلیم، اسٹارکیزر، کاسابلانکا، ایسٹر اور السٹرومیریا، الجاربيرا، ترک الجرين، الستاتس، عباد الشمس، الاستوما، نائٹ روز، الترخيليوم بيبي روز، برینٹس، والسايكس، والايكلبتوس گلاب جیسی اقسام شامل ہیں۔

تبوک کے پھول

اس کے علاوہ چیری گلاب خطے کے مشہور ترین گلابوں میں سے ایک سمجھا جاتا ہے۔ یہ دیگر گلابوں کی کُل پیداوار کا 50 فی صد ہے۔ اس کے متعدد رنگوں اور اس کی شیلف لائف کی وجہ سے اس کی بہت زیادہ مانگ ہے۔

تبوک کے علاقے میں ماحولیات، پانی اور زراعت کی وزارت کی شاخ کے اعداد و شمار کے مطابق تبوک میں پھولوں کی پیداوار سیکڑوں برس پرانی ہے۔خیال کیا جاتا ہے کہ یہاں پر 198ء میں پھولوں کی کاشت شروع کی گئی تھی۔

اس علاقے نے موسمی اور قدرتی حالات اور اس وقت پھولوں کی کاشت میں تربیت یافتہ تکنیکی کارکنوں کی کمی پر قابو پالیا ہے۔ اس لیے اس نے 1984 ء میں "استرا" فارموں کے ذریعے پھولوں کی اصل پیداوار شروع کی۔ اس وقت یہ صرف دو اقسام گلاب اور لونگ کی کاشت تک محدود تھا۔ پھر آنے والے برسوں اس میں اضافہ ہوتا گیا۔ آج یہ کئی اقسام کے گلاب کاشت کرتا ہے اور لوگ اس میں بڑے پیمانے پر سرمایہ کرتے ہیں۔

تبوک میں کسان پودوں کی دستیابی اور بلیک آؤٹ سسٹم سے لیس محفوظ جگہوں کے ذریعے کھاد ڈالنے، آبپاشی اور کیڑوں پر قابو پانے اور فصل کی محتاط نگرانی کے ذریعے پھولوں کی پیداوار کے تسلسل اور سال بھر اپنی پیداوار کی تقسیم کو یقینی بنانے کی کوشش کرتے ہیں۔ پھولوں تیاری کا مرحلہ 80 سے 95 دن تک ہوتا ہے جس کے دوران یہ پودوں کی نشوونما کے مرحلے سے گذرتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں