غزہ میں اسرائیلی فضائی حملے میں الجزیرہ کے صحافی کا پورا خاندان شہید

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

معاصر عرب ٹی وی الجزیرہ کا کہنا ہے کہ غزہ میں ان کے ایک صحافی کی اہلیہ، بیٹا اور بیٹی بدھ کی رات ایک اسرائیلی فضائی حملے میں جام شہادت نوش کر گئے ہیں۔

رائٹرز کے مطابق اس واقعے پر اسرائیلی فوج کی جانب سے تاحال کوئی بیان جاری نہیں کیا گیا ہے۔ حماس کے زیرِ انتظام وزارتِ صحت کا کہنا ہے کہ اس فضائی حملے میں 25 افراد شہید ہوئے ہیں۔

الجزیرہ کا کہنا ہے کہ وائل الدحدوح نے اپنے خاندان کو شمالی غزہ سے نصیرات منتقل کیا تھا کیونکہ اسرائیل کی جانب سے اہلِ علاقہ کو انتباہ جاری کیا گیا تھا کہ وہ حماس کے جنگجوؤں کے خلاف متوقع کاررائی سے قبل شمال کی طرف چلے جائیں۔

شہید ہونے والوں میں الجزیرہ کے صحافی کے خاندان کے باقی افراد بھی شامل ہیں۔ تاہم اب تک ٹی وی چینل کی جانب سے اسرائیل پر صحافی کے خاندان کو نشانہ بنانے کا الزام نہیں لگایا گیا ہے۔

عرب ٹی وی کی جانب سے نشر کی گئی لائیو فوٹیج میں وائل الدحدوح کو ہسپتال میں اپنے خاندان کے افراد کی لاشیں دیکھ کر دل گیر حالت میں دیکھا جا سکتا ہے۔ یاد رہے کہ حملے کے وقت وائل لائیو رپورٹنگ کر رہے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں