اسرائیلی لابی کی منفی مہم، معروف گلوکار راجر واٹرس کو ہوٹل کا کمرہ نہ مل سکا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

برطانوی مصنف، موسیقار اور گلوکار راجر واٹرس کے خلاف ارجنٹائن میں یہود مخالف مقدمہ دائر کردیا گیا۔ راجر واٹرس نے مونٹیویڈیو اور بیونس آئرس کے ہوٹلوں میں کمرہ نہ ملنے کی شکایت کی تھی۔ وہ کنسرٹ کرنے کے لیے وہاں گئے تھے۔ انہوں نے اسرائیلی لابی کی قیادت میں اپنے خلاف بائیکاٹ کی مہم کی شدید مذمت کی ہے۔

سابق بانی ’’ پنک فلائیڈ‘‘ نے حال ہی میں اپنے ’’This Is Not a Drill‘‘ ٹور کے ایک حصے کے طور پر برازیل میں کنسرٹ منعقد کیے تھے۔ جمعہ کو وہ مونٹیویڈیو میں اور اگلے منگل اور بدھ کو بیونس آئرس میں دو کنسرٹ کرنے والے ہیں۔

تاہم 80 سالہ فنکار نے ارجنٹائن کے اخبار "پاجینا 12" کو بتایا کہ ان کے پاس برازیل کے شہر ساؤ پالو میں رہنے کے سوا کوئی چارہ نہیں تھا۔ یہاں انہوں نے ہفتہ اور اتوار کو دو کنسرٹ کیے اور پھر طیارے میں اپنے کنسرٹ کرنے کے لیے دوسرے علاقوں کا سفر کیا۔

اخبار کے ساتھ اپنے انٹرویو میں انہوں نے کہا کسی نہ کسی طرح اسرائیلی لابی کے احمق افراد بیونس آئرس اور مونٹیویڈیو کے تمام ہوٹلوں کو کنٹرول کرنے اور اس غیر معمولی بائیکاٹ کو منظم کرنے میں کامیاب ہو گئے ہیں۔ میرے بارے میں بدنیتی پر مبنی جھوٹ پھیلایا جارہا ہے۔

واضح رہے یوراگوئے کی سنٹرل جیوش کمیٹی کے سربراہ روبی شنٹلر اور این جی او ’’بی نائے بی نیتھ‘‘ کے منتظم فرینکلن روزنفیلڈ نے اس ہفتے راجر واٹرس پر الزام لگایا تھا کہ وہ یہودیوں کے خلاف نفرت کو فروغ دے رہے ہیں۔

شنڈلر نے واٹرس کو ایک مصیبت پسند، زینوفوبیا میں مبتلا یہودی مخالف شخص قرار دیا۔ دوسری طرف روزنفیلڈ نے راجر واٹرس کے حوالے سے دھمکی دی تھی کہ اس "یہود مخالف آرٹسٹ" کی میزبانی کرنے کی صورت میں وہ ہوٹل سوفیٹل کے خلاف مہم شروع کردیں گے۔ واٹرس نے بتایا میں نے اپنی پوری زندگی میں کبھی بھی کسی ایسے خیال کو نہیں چھوا جس میں یہود دشمنی شامل ہو۔ میری تنقید اسرائیلی حکومت کے کام کرنے کے طریقے کے حوالے سے ہوتی ہے۔

بدھ کے روز ایک شخص نے بیونس آئرس کی ایک عدالت کے سامنے راجر واٹرس کے خلاف نسلی منافرت اور جرائم پر پر اکسانے کے الزام میں مقدمہ دائر کردیا۔

وکیل کارلوس برائٹ مین نے ایجنسی فرانس پریس کو بتایا کہ ہم چاہتے ہیں کہ ارجنٹائن کے حکام واٹرس کے رویے کا جائزہ لیں۔ امیگریشن سروس اس بات کا تعین کر سکتی ہے کہ آیا واٹرس کے ملک میں داخلے پر پابندی لگا دی جائے یا نہیں۔

انسانی حقوق کے دفاع کے لیے پرعزم موسیقار نے سال 2023 کے دوران کئی مرتبہ تنازعات کھڑے کئے ہیں۔ واٹرس نے سلامتی کونسل کے سامنے یوکرین میں روسی فوجی آپریشن کی مذمت کی تھی۔ برلن میں ایک متنازعہ کنسرٹ کے دوران واٹرس نے نازی ایس ایس افسران کی وردی کی یاد دلانے والی وردی پہنی اور این فرینک کا نام استعمال کرکے بھی ہنگامہ کھڑا کیا تھا۔

حالیہ برسوں میں موسیقار راجر واٹرس نے فلسطینی کاز کے دفاع کے نام پر اسرائیلی مصنوعات کے بائیکاٹ کے اقدامات کا دفاع کیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں