’وٹامن سی‘کی کمی پوری کرنےکے لیے کون سا پھل انتہائی مفید ہے؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
5 منٹس read

ہرسال سردیوں کی آمد کے ساتھ ہی لوگ نزلہ زکام اور انفلوئنزا سے بچاؤ کے لیے وٹامن سی کے سپلیمنٹس لینے کا سہارا لیتے ہیں۔ تاہم ایک حالیہ تحقیق میں اس عام روایت سے مختلف رائے سامنے آئی ہے کیونکہ اس میں یہ نتیجہ اخذ کیا گیا ہے کہ روزانہ کی بنیاد پر کیوی پھلوں کا استعمال بڑھانا چاہیے۔

صحت اور غذائیت کی خبروں میں مہارت رکھنے والی "ہیلتھ" ویب سائٹ کی طرف سے شائع ہونے والی ایک رپورٹ کے مطابق اگر یہ پھل استعمال کریں تو لوگوں کی ان سپلیمنٹس کو کھانے کی ضرورت ختم ہو سکتی ہے۔

حال ہی میں شائع ہونے والی تحقیق سے پتہ چلتا ہے کہ 6 ہفتوں تک روزانہ دو کیوی پھل کھانے سے ایسکوربک ایسڈ (وٹامن سی) کی مقدار میں 150 ملی گرام روزانہ اضافہ ہوتا ہے۔

قوت مدافعت بڑھائیں

محققین نے نشاندہی کی کہ "وٹامن سی" کی اس سطح کو روزانہ لینے سے سپلیمنٹس کی ضرورت ختم ہو جاتی ہے۔ اس کے علاوہ اس سے صحت کے مختلف اور فوائد بھی حاصل ہوتے ہیں۔

فیملی میڈیسن کی ماہر لورا پرڈی نے اس تحقیق پر تبصرہ کرتے ہوئےکہا کہ "کیوی پھل آپ کے مدافعتی نظام کو بڑھانے کے لیے جانا جاتا ہے"۔

انہوں نے "ہیلتھ " ویب سائٹ پر اپنے بیانات میں مزید کہا کہ "سردی اور فلو کے موسم میں مضبوط مدافعتی نظام کا ہونا ضروری ہے، تاکہ خود کو وائرس کے انفیکشن سے بچانے میں مدد مل سکے"۔

اگرچہ روزانہ کیوی پھل کھانےکے اثرات پر یہ مطالعہ 25 سے 60 سال کی عمر کے 24 صحتمند مردوں پر کیا گیا جن میں درجہ اول ، درجہ دوم کے ذیابیطس منفی یا گلوکوز کی عدم موجودگی کی تصدیق کی گئی۔ انہیں چھوٹے سائز کےدو پھل دیے گئے۔

شرکاء نے نہ صرف اپنے وٹامن سی کی سطح میں اضافہ کیا بلکہ انہوں نے اپنے فائبر کی مقدار میں بھی اضافہ کیا۔ ان کے سوزش والے بائیو مارکر اور میٹابولزم کو منفی طور پر متاثر کیا گیا۔

اس کا مطلب یہ ہے کہ کیوی پھل کو روزانہ کھانا کسی شخص کے میٹابولزم پر منفی ردعمل کے بغیر کھانا محفوظ خوراک ہے۔ البتہ اگر کوئی الرجی کا شکار ہو تو اس کا معاملہ الگ ہے۔

جلن کا سبب نہیں بنتا

پرڈی نے کہا کہ "یہ دلچسپ بات ہے کہ کیوی پھل سے ایک نادر الرجی ہوتی ہے"۔ انہوں نے مزید کہا کہ "اگر آپ کو الرجی کی کوئی علامت نظر آتی ہے، تو اپنے ڈاکٹر سے مشورہ کرنا ضروری ہے۔ اس میں گلے میں خارش، قے، زبان کی سوجن، نگلنے میں مشکل اور سانس لینے میں دشواری شامل ہیں‘‘۔

یہ قابل ذکر ہے کہ جب زیادہ تر لوگ وٹامن سی کی سطح کو بڑھانے کے بارے میں سوچتے ہیں تو وہ زیادہ سنگتر؎ے کھانے یا غذائی سپلیمنٹ لینے پر توجہ دیتے ہیں۔

تاہم ماہر غذائیت جیکولین وائمن کے مطابق اس تحقیق میں استعمال ہونے والا کیوی پھل "وٹامن سی کی زیادہ مقدار فراہم کرتا ہے"۔

انہوں نے کہا کہ"اپنی خوراک میں روزانہ ایک یا دو کیوی پھلوں کو شامل کرنے سے، آپ اس بات کو یقینی بنا سکتے ہیں کہ آپ کو وٹامن سی کی تجویز کردہ مقدار مل رہی ہے"۔

وائمن کے مطابق سن گولڈ کیوی پھل میں 130 ملی گرام وٹامن سی ہوتا ہے، جبکہ اسی پھل کی دیگر اقسام میں یہ مقدار 80 گرام تک ہوسکتی ہے۔

کیوی کی سبز قسم میں 70 ملی گرام وٹامن سی ہوتا ہے اور یہ "سن گولڈ" سے قدرے چھوٹی ہوتی ہے۔

سردی اور فلو پر کیوی کا اثر

اس بارے میں محدود تحقیق ہے کہ آیا کیوی فروٹ سردی یا فلو سے بچاتا ہے، اس میں وٹامن سی کی کافی مقدار موجود ہے۔

نزلہ زکام سے بچاؤ کے لیے وٹامن سی کی بڑی خوراک لینے کا خیال 1970ء کی دہائی میں اس وقت پیدا ہوا جب سائنسدان اور محقق لینس پالنگ نے پیش گوئی کی کہ اس وٹامن کو روزانہ 1000 ملی گرام لینے سے نزلہ زکام کے کیسز میں تقریباً 45 فیصد تک کمی آسکتی ہے لیکن دیگر کلینیکل اسٹڈیز اسے ثابت کرنے میں ناکام رہیں۔

کیوی

تاہم 2012ء کی ایک تحقیق میں بتایا گیا کہ کیوی کھانے سے "عام نزلہ زکام کی مدت کو معقول حد تک کم کیا جا سکتا ہے"۔

دیگر فوائد

کیوی پھل کھانے کے دیگر فوائد بھی ہیں۔ تحقیق سے معلوم ہوا ہے کہ اسے باقاعدگی سے کھانے سے اچھے کولیسٹرول (ایچ ڈی ایل) میں اضافہ ہوتا ہے، ٹرائگلیسرائیڈز کم ہوتے ہیں اور بلڈ پریشر کم ہوتا ہے۔

سن گولڈ خاص طور پر انیمیا کے شکار لوگوں کو آئرن سے بھرپور کھانوں کے ساتھ کھانے سے ان کے آئرن کی سطح کو بڑھانے میں مدد مل سکتی ہے۔

وائمن کے مطابق مختلف قسم کے پھلوں اور سبزیوں سے وٹامن سی حاصل کرنا سپلیمنٹس لینے سے بہتر ہے، کیونکہ یہ صرف ایک وٹامن کے بجائے بہت سے دوسرے فوائد پیش کرتے ہیں۔

وہ لوگ جو کیوی کی الرجی کا شکار ہو سکتے ہیں وہ سنگترے، میٹھی مرچ، انناس، اسٹرابیری، بند گوبھی اور گوبھی سے وٹامن سی حاصل کر سکتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں