فلسطینیوں کو ہتھکڑیاں لگا کر اسرائیلی فوجیوں کی مذاق اڑانے کی ویڈیو وائرل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

غزہ میں جاری جنگ کے دوران انسانی حقوق کو مد نظر رکھیں تو بر ملا کہا جاسکتا ہے کہ انسانی حقوق کی پاسداری کی یہ جنگ اسرائیل ہار چکا ہے۔ اسرائیل کی جانب سے ہزاروں بچوں اور خواتین کو نہ صرف قتل کیا جا چکا بلکہ صہیونی فوجی اور اسرائیل کے عام شہری بھی آئے روز انسانی اقدار کے حوالے سے اپنی پست ذہنی کا مظاہرہ کرتے رہتے ہیں۔

اسرائیلی فوج کے ارکان فلسطینیوں کے "توہین آمیز اور اشتعال انگیز" ویڈیو کلپس شائع کرتے رہتے ہیں۔ ایسی ہی ایک حالیہ ویڈیو سامنے آگئی ہے۔ اسرائیلی فوجی مغربی کنارے کے شہر جنین میں ایک گھر میں بیٹھے ہوئے ہیں۔ انہوں نے فلسطینیوں کو ہتھکڑیاں لگائی ہوئی ہیں اور ان کی آنکھوں پر پٹی باندھی ہوئی ہے۔ اس دوران اسرائیلی فوجی شیشہ پیتے ہوئے ان فلسطینیوں کا مذاق اڑا رہے ہیں۔

وائرل ہونے والی اس ویڈیو میں اسرائیلی فوج کے سپاہیوں کو شیشہ پیتے، ہنستے اور تصویریں لینے کے لیے تیزی دکھاتے ہوئے دکھایا گیا۔ ایک فوجی کہہ رہا ہے "بہت اچھا ہے، میں نے کبھی جینن کا اس طرح کا تصور بھی نہیں کیا تھا۔ میں آپ کو کیا بتاؤں!" پھر وہ فوٹوگرافر سے کہتا ہے کہ ان کو دکھاؤ جو میرے سامنے ہے۔ پھر کیمرہ ایسے قیدیوں کو دکھاتا ہے جنہیں ہتھکڑیاں لگی ہیں اور ان کی آنکھوں پر پٹی بندھی ہوئی ہے۔

ایک اسرائیلی فوجی نے آلو کے چپس کھاتے ہوئے اسے جواب دیا کہ’میں نے کبھی جینن کا اس طرح کا تصور بھی نہیں کیا تھا۔ پھر فوجی کہتے ہیں کہ وہ غزہ کے ساحل پر چھٹیاں گزارنا چاہتے ہیں۔

اسرائیلی فوجیوں کے غزہ میں رہائشیوں کے گھروں کی تلاشی لینے، دیگر کھلونوں کی دکان میں پلاسٹک کی گڑیوں کو تباہ کرنے، ایک لاوارث ٹرک میں کھانے اور پانی کے سامان کو جلانے کے دوران نسل پرستانہ نعرے لگاتے ہوئے رقص کرنے کے مناظر پہلے ہی سامنے آ چکے ہیں۔ اس طرح کی توہین آمیز ویڈیوز نے دنیا کے سامنے اسرائیلی حکام کو شرمندہ کرکے رکھ دیا ہے۔

ان ویڈیوز نے غزہ میں اسرائیلی فوجیوں کے توہین آمیز اور اشتعال انگیز رویے کی صرف چند مثالیں پیش کی ہیں۔ اس کے علاوہ صہیونی فورسز اس سے بھی زیادہ انسانیت سوز حرکات میں ملوث ہیں۔ غزہ جنگ شروع ہونے کے بعد جیلوں میں فلسطینی قیدیوں کو خاص طور پر تشدد اور بدسلوکی کا نشانہ بنایا جارہا ہے۔ غزہ کے ایک ہسپتال میں زخمیوں فلسطینیوں کو زندہ دفن کرنے کے رپورٹس نے دنیا کو ہلا کر رکھ دیا ہے۔

اپنی خفت مٹانے کے لیے اسرائیلی فوج نے انفرادی مقدمات کے ایک گروپ کے خلاف تادیبی اقدامات کرنے کا عہد کیا ہے۔

ناقدین کا خیال ہے کہ یہ نئے کلپس، جنہیں اسرائیل میں بڑی حد تک نظر انداز کر دیا گیا، ایک قومی مزاج کی عکاسی کرتے ہیں جو غزہ میں عام شہریوں کی حالت زار کی عکاسی کرتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں