کرونا کا سال سعودیوں کے لیے سب سے مایوس کن دور رہا

سعودیوں میں ہر قسم کے اضطراب کی بیماریاں سب سے زیادہ پائی جاتی ہیں: سروے نتائج

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

کرونا وبائی مرض کا دوروہ سال ہے جس میں سعودیوں میں ڈپریشن اور بڑھتی ہوئی تشویش کی سب سے زیادہ سطح دیکھی گئی۔ خاص طور پر سعودی شہریوں میں خوف، نقصان، حد سے زیادہ جذبات اور سماجی تنہائی سب سے زیادہ دیکھی گئی۔ نیشنل سینٹر فار مینٹل ہیلتھ پروموشن کے سیکرٹری جنرل ڈاکٹر عبدالحمید الحبیب نے ’’ العربیہ ڈاٹ نیٹ‘‘ سے گفتگو میں سعودیوں کے لیے سب سے زیادہ افسردہ سال کے بارے میں بات کی۔

نیشنل سینٹر فار مینٹل ہیلتھ پروموشن کے سیکرٹری جنرل نے انکشاف کیا کہ اس مدت کے علاوہ اسی مرکز میں نیشنل مینٹل ہیلتھ سروے کے نتائج کے مطابق سعودیوں میں ہر قسم کے اضطراب کی بیماریاں سب سے زیادہ پائی جاتی ہیں۔

ڈاکٹر عبدالحمید الحبیب نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کے ساتھ ایک انٹرویو میں بتایا کہ نوجوان وہ گروہ ہیں جو اضطراب اور ڈپریشن کا سب سے زیادہ شکار ہوتے ہیں کیونکہ وہ اس معاملے کو اس عمر کے مرحلے میں خصوصی چیلنجوں کی نوعیت سے منسوب کرتے ہیں۔ ساتھ ہی بہت سے نوجوانوں کے مستقبل کی توقعات کا سائز بڑا ہوتا ہے اور کامیابی نہ ملنے پر وہ مایوسی کا شکار ہوجاتے ہیں۔

انہوں نے تصدیق کی کہ نیشنل سینٹر فار مینٹل ہیلتھ پروموشن اضطراب اور ڈپریشن کے اشاریوں کی نگرانی کے لیے معیاری اور منظور شدہ سروے پیمائش کے ٹولز کا استعمال کرتا ہے۔ شہریوں کا ذہنی صحت اور صحت عامہ کے ماہرین کے ذریعے جائزہ لیا جاتا ہے۔ ایک محتاط تجزیہ کیا جاتا ہے۔ نیشنل سنٹر فار مینٹل ہیلتھ پروموشن کو 120,000 سے زیادہ مشورے اور نفسیاتی مدد کی درخواستیں موصول ہوئیں۔ جن میں ہفتہ وار اوسطاً ایک ہزار سے زیادہ مشاورتیں شامل ہیں۔

انہوں نے وضاحت کی کہ مملکت کو ذہنی صحت کے مسائل اور چیلنجوں کا سامنا ہے جس کے ذریعے قومی دماغی صحت کی حکمت عملی تیار کرنے، دماغی صحت کی خدمات کے نظام کو تیار کرنے، دماغی صحت کے فروغ کے پروگراموں کی تعمیراور ورچوئل ہیلتھ سروسز سے مستفید ہونے کے ذرائع تک رسائی کی سہولت فراہم کی جا رہی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں