خواتین کے آنسوؤں میں بو ہوتی ہے مگرمردوں کے آنسوؤں میں کیا ہوتا ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

پہلی نظر میں یہ عجیب لگ سکتا ہے کہ عورت روتی ہے تو مرد کا غصہ ٹھنڈہ ہوتا ہے۔ یہ بات ایک حالیہ تحقیق سے ثابت ہوئی ہے جس میں یہ نتیجہ اخذ کیا گیا ہے کہ خواتین کے آنسوؤں میں ایسا مادہ ہوتا ہے جو سانس لینے پر مردوں میں جارحیت کو کم کرتا ہے۔

اخبار ’گار ڈین‘کے مطابق تحقیق کے مطابق خواتین کے جذباتی آنسو سانس لینے سے ٹھوس ٹیسٹوں میں مردانہ جارحیت میں 40 فیصد سے زیادہ کمی آئی۔ دماغ میں بھی اسی طرح کی تبدیلیوں کو تحریک ملی، حالانکہ اس تحقیق کو کرنے والے سائنسدانوں کا خیال ہے کہ تمام انسانی آنسووں کا ایک جیسا اثر ہوتا ہے۔

اسرائیل کے ویزمین انسٹی ٹیوٹ آف سائنس میں نیورو سائنس کے پروفیسر نوم سوبل نے کہا کہ "مرد کے غصے میں کمی ہمارے لیے متاثر کن تھی۔ یہ حقیقی معلوم ہوتی ہے۔ رونے کے بارے میں ہر چیز دراصل جارحیت کو کم کرتی ہے"۔

فطرت پسند چارلس ڈارون رونے کی وجہ کے بارے میں تذبذب کا شکار تھا۔1872ء میں اپنی کتاب "انسان اور جانوروں میں جذبات کا اظہار" میں اس نے اعلان کیا کہ رونا "آنکھ سے باہر آنسوؤں کے رطوبت کی طرح بے معنی ہے"۔

"آنسوؤں کے کردار"

لیکن اس کے بعد سے 150 سالوں میں محققین نے آنسوؤں کے لیے مختلف کردار تجویز کیے ہیں۔ کمزوری اور معذوری کے اشارے سے لے کر آنکھوں سے بیکٹیریا نکالنے تک سب میں آنسوؤں کے مختلف کردار تھے۔

سوبل کی لیبارٹری میں پچھلی تحقیق سے معلوم ہوا تھا کہ خواتین کے آنسو سانس لینے سے مردوں میں ٹیسٹوسٹیرون کم ہو جاتا ہے، لیکن یہ واضح نہیں تھا کہ آیا اس سے رویے متاثر ہوتے ہیں۔ جہاں تک جانوروں کا تعلق ہے، تصویر واضح ہے ننگے تل چوہے خود کو حملہ آوروں سے بچانے کے لیے آنسوؤں سے ڈھانپ لیتے ہیں۔

تازہ ترین تحقیق میں سوبل کی لیب میں ڈاکٹر شانی ایگرون اور دیگر نے ان آنسوؤں کو اکٹھا کیا جو خواتین کے چہروں پر گرتے تھے جب وہ اداس فلمیں دیکھتے تھے۔

محققین نے خاص طور پر آنسو عطیہ کرنے والوں کا اعلان نہیں کیا، لیکن بتایا کہ آنسو عطیہ کرنے والی تقریباً تمام خواتین تھیں، اور ان میں سے چھ کو آنسونکالنے کے لیے منتخب کیا گیا۔

کمپیوٹرائزڈ گیم

تجربات میں 31 مرد شامل تھے جنہوں نے یا تو نمکین محلول یا خواتین کے آنسو سانس لیے تھے۔ مردوں نے نفسیات میں استعمال ہونے والے کمپیوٹر گیم میں حصہ لیا تھا جو کھلاڑیوں کے پوائنٹس کو غیر منصفانہ طریقے سے کم کرکے جارحانہ رویے کو بھڑکاتا تھا۔

سائنس دانوں نے جریدے پلس بائیولوجی میں لکھا ہے کہ جارحانہ رویہ، انتقامی کارروائی کی صورت میں 43.7 فیصد کم تھا جب مردوں نے خواتین کے آنسو کو نمکین محلول کے مقابلے میں سانس لی تھی۔

دماغی سکینر میں مزید ٹیسٹوں سے یہ بات سامنے آئی کہ جن لوگوں نے آنسو سونگھے ان میں بدبو اور جارحیت سے نمٹنے والے علاقوں کے درمیان زیادہ فعال رابطہ تھا، جب کہ جارحیت کے لیے دماغی نیٹ ورکس میں سرگرمی کم تھی۔

پروفیسر سوبل نے کہا کہ "یہ کیمیکل جارحیت کے بارے میں دماغ کے ردعمل کو منظم کرتا ہے"۔

سائنسدانوں کو ایک پہیلی کا سامنا کرنا پڑا ہے کہ اگرچہ چوہوں کے پاس ایک حسی نظام ہے جو اس طرح کے مواد کا پتہ لگا سکتا ہے لیکن انسانوں کے لیے ایسا کرنے کا کوئی طریقہ معلوم نہیں ہے۔

لیبارٹری ٹیسٹوں میں ڈیوک یونیورسٹی کی ٹیم کے محققین نے نتیجہ اخذ کیا انسانی آنسوؤں کے ذریعے بدبو سے حساس نیورونز پر چار قسم کے رسیپٹرز کو چالو کیا گیا تھا، جو تجویز کرتے ہیں کہ وہ اس مادے کو حملہ آور کے طور پر جواب دے سکتے ہیں۔

سوبل نے تسلیم کیا کہ آنسوؤں میں موجود کیمیکلز کا بالغوں کے سماجی تعاملات پر کوئی خاص اثر ہونے کا امکان نہیں ہے، لیکن وہ قیاس کرتے ہیں کہ آنسوؤں کی ساخت کمزور بچوں کی حفاظت کے لیے تیار ہوئی ہو گی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں