فلسطین اسرائیل تنازع

’امن کی بحالی اور گھروں کو واپسی‘ نئے سال کے لیے اہالیان غزہ کی واحد تمنا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سال 2023ء کے آخری دن غزہ کی پٹی کے اندر بے گھر ہونے والے متعدد افراد نے نئے سال کے لیے اپنی خواہشات کا اظہار کیا جب کہ اسرائیلی حملے بدستور جاری تھے۔

ان سب نے ایک خواہش پر اتفاق کیا کہ وہ اپنے گھروں اور اپنی زندگیوں میں واپس جانا چاہتے ہیں جیسا کہ وہ گذشتہ اکتوبر میں شروع ہونے والی جنگ سے پہلے تھے۔

غزہ کی پٹی کے جنوب میں واقع فلسطینی رفح میں ایک اسکول کے اندر نقل مکانی کرنے والی لڑکی جاناں نے کہا کہ "سال 2023 اداسی کا سال تھا۔ یہ سال خاص طور پر غزہ کے لوگوں کے لیے افسوسناک اور مشکل تھا۔ امید ہے کہ سال 2024 غزہ کے لوگوں کے لیے خوشی کا سال ہو گا اور ہم اپنے گھروں کو لوٹ جائیں گے‘‘۔

غزہ میں نقل مکانی کرنے والے نوجوان محمد نے کہا کہ "ان شاء اللہ ہمارے لیے ایک خوشگوار اور اچھا سال گذرے گا۔ سال 2023 کی طرح نہیں جس میں ہماری زندگیاں بدل گئی ہیں"۔

"غزہ واپسی کے لیے"

ایمن نامی ایک اور نوجوان نے بھی نئے سال کے حوالے سے اپنی خواہشات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ 2024ء میں میری خواہش ہے کہ میں اپنا ہائی سکول ڈپلومہ مکمل کروں تاکہ میں اپنا مستقبل بنا سکوں اور بیرون ملک کسی ایسے نوجوان کی طرح بن سکوں جو ہم سے بہتر حالات میں زندگی گزار رہا ہو۔

"محفوظ طریقے سے باہر نکلنے کے لیے"

نقل مکانی کرنے والی دوشیزہ حیا نے بتایا کہ ان کی خواہش ہے کہ وہ اس سال بہ حفاظت باہر نکل جائیں۔ وہ کہتی ہیں کہ"پچھلے سالوں میں ہم نئی خواہشات کرتے تھے لیکن یہ سال مختلف ہے۔ ایک شخص غزہ سے محفوظ طریقے سے نکلنے کی امید کرتا ہے اور کچھ نہیں۔ میں ہائی سکول مکمل کرنے اور اعلیٰ تعلیم حاصل کرنے کی امید کر رہی تھی لیکن ایسا نہیں ہو سکا ہے۔

"بس امن بحال ہو جائے"

ایک اور بے گھر شخص جمال نے کہا کہ وہ لوگوں کو بے گھر کرنے کی کسی بھی کوشش کو مسترد کرتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ "ہماری واحد خواہش یہ ہے کہ سلامتی اور استحکام واپس آئے، ہمارے درمیان سلامتی اور تحفظ غالب رہے اور ہم اپنی زندگی مکمل کرنے کے قابل ہوں۔ ہم کسی دوسرے ملک میں بے گھر ہونا قبول نہیں کریں گے۔"

بسمہ نامی ایک بے گھر خاتون نے اس علاقے میں واپس آنے کی امید ظاہر کی جہاں وہ رہتی تھی۔انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ اسے وہاں اپنے پیاروں اور رشتہ داروں کی کمی محسوس ہوتی ہے۔

خاتون نے کہا کہ "مجھے امید ہے کہ نئے سال میں ہم اچھی صحت اور حفاظت کے ساتھ اپنے ملک اور غزہ میں اپنے اصل گھر واپس آئیں گے۔ مجھے یہ بھی امید ہے کہ ہمارا خطہ محفوظ رہے گا کیونکہ جو کچھ ہم نے سنا اس کے مطابق اس پر بمباری کی گئی۔ ہمیں امید ہے کہ خدا ہمیں غزہ میں اپنے پیاروں سے دوبارہ ملا دے گا جنہیں ہم نے طویل عرصے سے نہیں دیکھا۔ تقریباً تین ماہ سے ہم نے ایک دوسرے کو نہیں دیکھا"۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں