مصر میں ایک مزدور کے گھر سے" نوادرات کا ایک بڑا میوزیم " ضبط

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

مصری سکیورٹی سروسز کو قاہرہ کے جنوب مغرب میں فیوم گورنری میں معمولی مزدور کی ایک ورکشاپ کے اندر آثار قدیمہ کا ایک بڑا میوزیم ملا ہے۔

مصری وزارت داخلہ نے اعلان کیا کہ اسے اطلاعات موصول ہوئی ہیں کہ فیوم شہر میں لیث ورکشاپ کا مالک نوادرات کی اسمگلنگ کر رہا ہے۔ اس کے پاس بہت سے بڑے نوادرات ہیں اور انہیں فروخت کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔

وزارت داخلہ نے کہا کہ معلومات کی تصدیق کی گئی اور ورکشاپ پر فوری طور پر چھاپہ مارا گیا، جہاں اس کا مالک ایک بے روزگار شخص کے ساتھ موجود تھا۔

مزدور سے برآمد ہونے والے نوادرات
مزدور سے برآمد ہونے والے نوادرات

ان کے قبضے سے آثار قدیمہ کے عجائب گھر کی طرح دکھائی دینے والی جگہ ملی۔ انہوں نے مزید کہا کہ لکڑی سے گھری ہوئی ایک دھاتی تختی فریم، ایک قدیم مخطوطہ، ایک سجاوٹی لکڑی کا صندوق، اور کتان کے کپڑے کے تین ٹکڑے قبضے میں لے لیے گئے۔اس میں قدیم تحریریں، پینٹنگز اور ایک لکڑی کے آئیکن پر ہاتھی دانت کے ساتھ قدیم خاکوں کے ساتھ جڑا ہوا ہے۔

وزارت داخلہ نے مزید کہا کہ اسےملزمان کے قبضے سے ایک کتاب ملی جس میں دھاتی کور ہے جس میں متعدد زبانوں میں تحریریں ہیں، لکڑی کے دو گول ٹکڑے جن پر لاطینی علامتیں ہیں۔ ایک دھاتی زنجیر، چمڑے کی سات چادریں جن پر تاریخی تحریریں اور نوشتہ جات ہیں اور مختلف اشکال اور سائز کے 85 سکے جو رومن دور کےبتائے جاتے ہیں۔

مصری وزارت داخلہ نے انکشاف کیا کہ جب ضبط شدہ اشیاء کو مجاز حکام کے سامنے پیش کیا گیا تو انہوں نے اطلاع دی کہ ضبط کی گئی تمام اشیاء نوادرات کی ہیں جن میں سے ایک رومی دور کی ہے اور باقی ضبط کی گئی اشیاء 14 ویں، 16ویں، 17ویں، 19ویں اور 20 ویں صدی کی ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں