ہزاروں برس سے سعودی جزیرہ تاروت، فلیمنگو کے لیے ایک گرمائی مسکن

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

پانچ ہزار سال پر محیط اپنے تہذیبی سفر کے دوران، مشرقی سعودی عرب میں واقع جزیرہ تاروت کو مختلف اقسام کے پرندوں کے لیے ماحولیاتی لحاظ سے ایک اہم مقام سمجھا جاتا رہا ہے، اور یہ خلیج عرب میں ہجرت کرنے والے پرندوں کا پہلا پڑاؤ ہے۔

تاروت جزیرے پر ہجرت کرنے والے پرندوں کو افزائش نسل اور نقل مکانی کے لیے مناسب ماحول ملتا ہے، کیونکہ یہ جزیرہ انہیں من پسند خوراک اور پانی سے بھرپور قدرتی رہائش فراہم کرتا ہے۔

ہجرت کرنے والے پرندے ماحولیاتی نظام میں اہم کردار ادا کرتے ہیں، وہ بیجوں کو پھیلانے اور پودے اگانے میں مددگار ہوتے ہیں۔

یہ نقل مکانی کرنے والے پرندے بھی اس خطے کے حیاتیاتی تنوع کو بڑھانے میں اپنا کردار ادا کرتے ہیں۔

جزیرہ نما عرب کے پرندوں کی نگرانی اور تحفظ کے گروپ کے سربراہ محمد الزائر نے بتایا کہ: "سمندری پرندے ساحل پر بڑے گروہوں میں اترتے ہیں، جب کہ زمینی پرندے کھیتوں، درختوں اور کھلی جگہوں پر جزیرے پر منتشر ہوتے ہیں۔"

"سمندری پرندے اپنے ہجرت کے سفر کے دوران افزائش نسل اور زندگی گزارنے کے مقصد سے جزیرہ تاروت جاتے ہیں، جبکہ خشکی کے پرندے اسے آرام کی منزل کے طور پر اپناتے ہیں، ماحولیاتی تنوع کی وجہ سے ہر طرح کے پرندوں کے لیے سازگار ہے۔"

ماحولیاتی وجوہات

الزائر نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کے ساتھ اپنے انٹرویو میں تشویش ظاہر کی کہ دنیا بھر میں پرندوں کی تعداد میں کمی بہت سی ماحولیاتی وجوہات کی بناء پر ہو رہی ہے اور یہ کمی گزشتہ پچیس برسوں میں جزیرہ تراوت پر بھی نمایاں ہوئی ہے۔ جزیرے نے نقل مکانی کرنے والے پرندوں کے لیے بہت سے قدرتی رہائش گاہیں کھو دی ہیں۔

انہوں نے ذکر کیا کہ تراوت جزیرہ ایک سبز خطہ تھا۔ آج کھیتوں کا پھیلاؤ بھی محدود ہو گیا ہے، اسی طرح ریتیلے ساحل، اور تازہ پانی کے ذرائع جن پر کچھ پرندے انحصار کرتے ہیں کم ہو گئے ہیں۔ سال بہ سال مینگرو کے جنگلات میں کمی کے علاوہ یہ ناپید ہو چکے ہیں، اور یہ تمام وجوہات ہیں جو لامحالہ ہجرت کرنے والے پرندوں کی تعداد میں کمی کا باعث بنتی ہیں۔

انہوں نے یہ بھی مزید کہا: "تاروت جزیرے پر تقریبا 230 انواع کے پرندے ہجرت کر کے آتے رہے ہیں۔

فلیمنگو

الزائر نے کہا کہ کچھ فلیمنگو، جنہیں ساحلی پرندے سمجھا جاتا ہے، اپنی سالانہ موسم سرما کی ہجرت کے دوران جزیرہ تاروت جاتے ہیں۔ یہ نومبر کے مہینے مارچ تک آتے رہتے ہیں۔

انہوں نے نشاندہی کی کہ فلیمنگو جھنڈوں کی تعداد سال بہ سال مختلف ہوتی ہے، بعض سالوں میں وہ بڑی تعداد میں ہوتے ہیں، اور ایک ریوڑ میں ہزار کے قریب پہنچ جاتے ہیں، اور کچھ سالوں میں وہ ایک ریوڑ میں 200 سے 400 پرندوں کی حد تک پہنچ پاتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پچھلے دس سالوں میں ہر سال تعداد کم ہونے لگی۔

قطیف میں فلیمنگو کے 4 علاقے

الزائر نے بتایا کہ قطیف گورنری کے چار علاقوں میں فلیمنگو پائے جاتے ہیں جن کا جزیرہ تاروت کو سمجھا جاتا ہے۔

پہلا علاقہ تاروت جزیرے پر الزور کے علاقے میں مینگروو کے جنگلات ہیں جو ان علاقوں میں سے ایک ہے جو کوسٹ گارڈ کے تحفظ میں ہے، اس لیے یہ فلیمنگو کی موجودگی کے لیے اب بھی ماحولیاتی لحاظ سے بہترین علاقہ ہے۔

انہوں نے مزید کہا: سیہات شہر کے النسیم محلے میں سیہات بے دوسرا علاقہ ہے جس میں مینگروز بھی شامل ہیں اور فلیمنگو کی بڑی تعداد موجود ہے ، رواں سال تقریباً 400 فلیمنگو کی آمد ہوئی۔

اہمیت اور موجودگی کے لحاظ سے تیسرا خطہ تراوت جزیرہ پر ترکی کا صنعتی زون ہے، خاص طور پر الزور مینگرووز کے مغربی علاقے میں، اور چوتھا خطہ ماجدیہ کے علاقے میں قطیف گورنریٹ کورنیچ ہے۔

فلیمنگو ان چار علاقوں کے درمیان منتقل ہوتے ہیں، یا وہاں مستقل طور پر موجود رہتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ان علاقوں میں فلیمنگو کی تعداد میں کمی کی وجہ وہاں کے ریتیلے ساحلوں کا ماحولیاتی تجاوزات کی زد میں آنا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں