سعودی آرٹسٹ کا قومی دن پر ولی عہد کے لیے 600 روبیک کیوبز سے بنائے آرٹ کا تحفہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سعودی عرب کی ایک خاتون آرٹسٹ نے ’روبیکس کیوب‘ کو آرٹ ورک میں تبدیل کرتے ہوئے اس کی مدد سے سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کی شخصیت کو مجسم کر کے اپنی تخلیقی اور فن کارانہ مہارت کا ثبوت پیش کرنے کے ساتھ قیادت کے ساتھ اپنی والہانہ محنت کا اظہار کیا ہے۔

’العربیہ ڈاٹ نیٹ‘ سے بات کرتے ہوئے آرٹسٹ سارہ حمدان نے کہا کہ "میں نے ڈرائنگ اور آرٹس کے شعبے میں اس وقت قدم رکھا جب میری عمرصرف 12 سال تھی۔ میں نے 14 سال کی عمر میں Rubik's Cube الگورتھم سیکھنا شروع کیا۔ شروع میں مقصد صرف یہ تھا کہ کیوب کو حل کرنا سیکھا جائے۔ پھر میں اس میں گہرائی میں چلی گئی۔ مجھے ایک مکعب حل کرنے میں 10 گھنٹے لگے اور میں نے اس کی مشق جاری رکھی۔ یہاں تک کہ میں اوسطاً ڈیڑھ منٹ فی مکعب حل کرنے کے مقام پر آگئی۔

ایک سوال کے جواب میں سارہ نے کہا کہ "قومی دن سے پہلے میں ایک منفرد پینٹنگ بنانے کے بارے میں سوچ رہی تھی جس ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کے لیے ان کی نوجوانوں کی توانائیوں اور ہمارے مستقبل میں دلچسپی کے لیے ان کا شکریہ ادا کرسکوں۔

مجھے روبیک کیوبز سے پینٹنگ بنانے کا خیال آیا۔ اپنے خاندان کے تعاون اور دوستوں کی حوصلہ افزائی سے میں نے اس پر کام شروع کیا۔ 600 کیوبز کے ساتھ ایک کام مکمل کرنا بہت بڑا چیلنج تھا۔ یونیورسٹی کے امتحانات کی وجہ سے وقت کم تھا اور مجھے کام کرنے میں 3 دن لگے، میں دن میں دو گھنٹے کام کرتی"۔

روبیکوبزم کا فن

روبیکوبزم کے فن کے بارے میں سعودی آرٹسٹ سارہ حمدان نے بتایا کہ اس میں روبیکس کیوبز کا استعمال کرتے ہوئے تصاویر کو پیش کرنا شامل ہے اور یہ موزیک آرٹ سے ملتا جلتا ہے۔اس میں بنیادی خیال تصویر کو چھوٹی اکائیوں یا پکسلز میں تقسیم کرنا ہے تاکہ روبک کے ہر ٹکڑے کا استعمال کیا جا سکے۔

روبِیک کی پینٹنگز بنانے کے لیے درکار بنیادی مہارت روبِکس کیوب کے حل میں مہارت حاصل کرنے میں مضمر ہے۔ اسے 8 الگورتھم میں دکھایا گیا ہے، کیونکہ پینٹنگز بنانے کے لیے کیوب کو مطلوبہ شکل میں بنانے میں مہارت اور رفتار کی ضرورت ہوتی ہے۔ اس کے کسی بھی حصے میں ایک غلطی ایک ہی مکعب پوری پینٹنگ کی خصوصیات کو تبدیل کرنے کے لیے کافی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں