خبردار! میڈیم رئیر بیف برگر جان لیوا بھی ہوسکتے ہیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اگرچہ میڈیم رئیر درجے کا بیف برگر کھانا بہت سے لوگوں کے لیے ایک مثالی خوراک ہے۔ فن لینڈ میں محققین نے نتیجہ اخذ کیا کہ گراؤنڈ بیف سٹیک کو کم پکانے سے فوڈ پوائزننگ کا خطرہ بڑھ جاتا ہے جو متلی، اسہال اور الٹی کا باعث بنتا ہے۔

’ڈیلی میل‘ کے مطابق ایک تازہ ترین مطالعے کے دوران فنش فوڈ اتھارٹی کی ایک ٹیم نے کھانے کے اداروں میں کھانا پکانے کے طریقوں کی پیروی کی اور خطرے کی تشخیص کی۔

تجزیے سے معلوم ہوا کہ اگر برگر کے گوشت کا صرف دسواں حصہ 55 ڈگری سینٹی گریڈ کے اوسط درجہ حرارت پر پکایا جائے تو فن لینڈ میں ہر ایک لاکھ شہریوں پر سالانہ فوڈ پوائزننگ کے 100 کیسزسامنے آئیں گے، جب کہ تمام گوشت کے ٹکڑوں کو مکمل طور پر پکایا جائے گا تو ایک لاکھ میں سے تین کیسز سامنے آئیں گے۔

یوکے فوڈ سٹینڈرڈز ایجنسی (FSA) کے مطابق گائے کو ذبح کرنے پر گائے کا گوشت بیکٹیریا سے بھرا ہو سکتا ہے۔آنتوں کے بیکٹیریا گوشت کی سطح کو آلودہ کرتے ہیں۔

زہریلا اور ممکنہ موت کا باعث

سلمونیلا اور شیگا ٹاکسن جو Escherichia coli (E-coli بیکٹیریا) پیدا کرتے ہیں کچے گائے کے گوشت میں پائے جانے والے سب سے عام بیکٹیریا میں شامل ہیں۔ یہ بیکٹیریا فوڈ پوائزننگ اور سنگین بیماری کا باعث بن سکتے ہیں، اور انتہائی سنگین صورتوں میں موت کا باعث بن سکتے ہیں۔

یونیورسٹی آف ریڈنگ میں فوڈ مائیکروبائیولوجی کے ایسوسی ایٹ پروفیسر ڈاکٹر کیمون اینڈریاس کراتزاس نے کہا کہ "ہم ان تمام نقصان دہ بیکٹیریا کو مارنے کے لیے کھانا بناتے ہیں جو ہمیں بیمار کر سکتے ہیں یا ہمیں مار سکتے ہیں۔ ہمیں درجہ حرارت کو اچھی سطح تک بڑھانے کی ضرورت ہے۔ کم از کم 71 ڈگری سینٹی گریڈ تک اس گوشت کو پکانا چاہیے"۔

یہ قابل ذکر ہے کہ برگرسٹیک کو 70 ڈگری سینٹی گریڈ پر دو منٹ تک اچھی طرح پکانے سے 99.9 فی صد نقصان دہ بیکٹیریا ہلاک ہو جاتے ہیں جو انسانی صحت کے لیے خطرہ بن سکتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں