سکیورٹی گشت ھجانہ میں کام کرنے والی پہلی نوجوان سعودی خاتون توجہ حاصل کرنے لگیں

نوجوان خاتون اپنی فوجی وردی میں اونٹ پر سوار ہو کر یوم تاسیس پر فوجی پریڈ میں مارچ کرتی نظر آئیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی خاتون ھجانہ نے اس وقت توجہ مبذول کرا لی ہے جب وہ پہلی نوجوان خاتون کے طور پر نمودار ہوئیں۔ انہیں سکیورٹی گشت کے حصے کے طور پر منتخب کیا گیا، وہ نقل و حمل کے لیے اونٹوں کا استعمال کرتی ہیں۔ ھجانہ اس مشن کو باضابطہ طور پر منعقد کرنے والی پہلی خاتون بن گئی۔

نوجوان خاتون اپنی مکمل فوجی وردی میں اونٹ پر سوار ہو کر وزارت داخلہ کی طرف سے یوم تاسیس کے موقع پر منعقد کی جانے والی فوجی پریڈ میں مارچ کرتی نظر آئیں۔ وزارت داخلہ نے "ایکس" پلیٹ فارم پر اپنے آفیشل اکاؤنٹ پر ھجانہ کی شرکت کے متعلق ایک کلپ شائع کیا۔

تقریب میں شرکت کرنے والے سعودی فنکار فائز المالکی نے "X" پلیٹ فارم پر اپنے آفیشل اکاؤنٹ کے ذریعے سعودی ھجانہ کے ساتھ ایک مختصر انٹرویو شائع کیا تاکہ دنیا کو ان کے بارے میں مزید معلومات فراہم کی جاسکیں۔

سعودی پبلک سیکیورٹی کے ڈائریکٹر لیفٹیننٹ جنرل محمد البسامی نے کہا کہ درعیہ گورنری میں وزارت داخلہ کے ھجانہ بینڈ کی موجودگی کو ورثہ کی بحالی اور اونٹ کے سال 2024 کے ساتھ رفتار برقرار رکھنے کی علامت سمجھا جاتا ہے۔

البسامی نے مزید کہا کہ ھجاانہ دستہ درعیہ گورنری میں سکیورٹی کو برقرار رکھنے کے لیے دیگر حفاظتی گشتوں کے ساتھ مل کر کام کرے گا۔ مملکت میں ھجانہ کی تاریخ 90 سال سے زیادہ پرانی ہے۔ یہ شاہ عبدالعزیز کے دور میں قائم ہوئی تھی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں