سیسہ پلائی دیوار کا منظر، لاکھوں لوگ مسجد حرام میں عبادات میں مشغول

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

رمضان المبارک کے آخری عشرہ میں لاکھوں لوگ بڑی تعداد میں مسجد حرام کے صحنوں، راہداریوں اور فرشوں کے درمیان نقل و حرکت کر رہے ہیں۔ ریاستی صدارتی سکیورٹی اپنی حفاظتی ایوی ایشن کے ذریعے ضیوف الرحمن کو سہولیات فراہم کررہی اور مسجد حرام میں موجود افراد کی نگرانی کر رہی ہے۔

المسجد الحرام میں سعودی حکومت کی جانب سے بڑے پیمانے پر پھیلائے گئی سرگرمیوں کی نگرانی اور ضیوف الرحمن کو پیش کی گئی سہولیات کا جائزہ لیا جارہا ہے۔

8 ہزار سپیکرز

المسجد الحرام میں آڈیو سسٹم اذان ، اقامت، نماز اور خطبات کی آواز کو آگے پیش کرتاہے۔ 120 سے زیادہ انجینئرز اور ٹیکنیشن ہر نماز سے قبل اس سسٹم کی مسلسل پیروی کرتے ہیں تاکہ 8 ہزر سے زیادہ سپیکرز پر مشتمل ساؤنڈ نیٹ ورک کو فیڈ کیا جا سکے۔ یہ سپیکر المسجد الحرام کے اندر، اس کے صحن، نئی توسیع اور اطراف کی سڑکوں پر لگائے گئے ہیں۔

آواز کو اعلیٰ درجے کی حساسیت کے ساتھ سینسر کے ذریعے گرفت میں لیا جاتا ہے۔ مسجد حرام کے مؤذن اور اماموں کی آوازوں کو ایک آڈیو بیلنس کے مطابق روزانہ کی بنیاد پر سیٹ کیا جاتا ہے تاکہ مکہ میں مسجد حرام کے مختلف حصوں میں آواز کے معیار کو یقینی بنایا جا سکے۔ .

کئی مینٹیننس انجینئرز 24 گھنٹے صوتی ماخذ کے لیے فالتو مائیکروفون کی نگرانی بھی کرتے ہیں۔ یہ اضافی مائیکرو فون کسی خرابی کی صورت میں یہ خود بخود کام کرنا شروع کردیتے ہیں۔ مطاف اور اس کے اطراف موجود سپیکرز کی آواز کو بھی متوازن کیا جاتا ہے۔

صفائی کا کام دو گناہ بڑھ گیا

مسجد حرام اور مسجد نبوی کی دیکھ بھال کے لیے جنرل اتھارٹی نے مسجد حرام، اس کے اندرونی اور بیرونی صحنوں، چھتوں، نئی بڑی توسیع کے داخلی راستوں اور راہداریوں میں صفائی کی سطح مزید بہتر کرنے کی اپنی کوششوں کو بھی دو گنا کردیا ہے۔ رمضان المبارک کے آخری عشرہ کے دوران مسجد میں 4000 مرد و خواتین کارکن صفائی کے کام میں شریک ہو رہے ہیں۔ جنرل اتھارٹی نے صفائی ستھرائی، دیکھ بھال اور جراثیم کشی کے پروگراموں کو تیز کردیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں