میڈیکل ڈیوائس کی مرمت کرنے کیلئے اردنی ڈاکٹر جان خطرے میں ڈال کر غزہ داخل

ڈاکٹر عثمان الصمادی نے سی ٹی سکین مشین کی دیکھ بھال کا ویڈیو کلپ شیئر کیا، تعاون کرنے والوں کا شکریہ ادا کیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

اردنی ڈاکٹر عثمان الصمادی اپنی جان خطرے میں ڈال کر سی ٹی سکین مشین کو ٹھیک کرنے کے لیے اردن سے غزہ کی پٹی تک جانے میں کامیاب ہو گئے۔ مشین کچھ عرصے سے ٹوٹی ہوئی تھی۔ اسرائیلی فوج کی بربریت کے آغاز کے بعد غزہ کی پٹی میں یہ صرف ایک ہی مشین بچی تھی۔

اردنی ڈاکٹر عثمان الصمادی نے کہا کہ وہ غزہ کے یورپی ہسپتال گئے اور انجینئرنگ اور مینٹیننس ڈیپارٹمنٹ کے اہلکاروں کے ساتھ مل کر غزہ میں واحد سی ٹی مشین کو دوبارہ شروع کرنے میں کامیاب رہے۔ مشین بند ہوگئی تھی اور اسے دیکھ بھال اور مرمت کی ضرورت تھی۔ ڈاکٹر نے کہا وہ اردن میں تکنیکی ماہرین اور ماہرین کے ایک گروپ کی بھرپور کوشش کے بعد ڈیوائس کے لیے مطلوبہ پرزے حاصل کرنے میں کامیاب ہوئے۔

ڈاکٹر الصمادی نے ڈیوائس کی دیکھ بھال کا ایک ویڈیو کلپ شائع کیا۔ اس میں انہوں نے ہر اس شخص کے لیے شکریہ اور تعریف کا پیغام بھیجا گیا جس نے متاثرہ شعبے کو امداد پہنچانے میں تعاون کیا۔ ڈاکٹر الصمادی نے غزہ کی پٹی کے لوگوں کو خوشخبری بھی سنائی اور انڈونیشیا کے ہسپتال کو ایک نیا الیکٹرک جنریٹر فراہم کرنے کا اعلان کردیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں