"ایپل" مقابلے کے 3 فاتحین میں سعودی طالبہ بھی شامل

جواہر العنزی نے اپنی کامیابی کی کہانی کی جڑیں اپنے دادا کے ساتھ گزارے بچپن سے جوڑیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

بین الاقوامی کمپنی (ایپل) نے اپنی ویب سائٹ پر ایپل ڈویلپر اکیڈمی سے تعلق رکھنے والے سعودی طالبہ جواہر العنزی کی فتح کا اعلان کیا اور انہیں بہترین تین فاتحوں میں سے ایک قرار دے دیا۔ ایپل کے عالمی سوئفٹ چیلنج میں 35 ملکوں کی نمائندگی کرنے والے 350 فاتحین میں جواہر العنزی نے بھی نمایاں مقام حاصل کیا۔ ایپل ڈویلپر اکیڈمی ایپل اور طویق اکیڈمی کے درمیان شراکت داری سے بنائی گئی ہے۔

ایپل کے صدر ٹم کک نے طالبہ ایپل ڈویلپر اکیڈمی کی تعریف کی۔ وہ اس چیلنج میں سب سے بہترین تین مخصوص پروجیکٹس پیش کرنے والی پہلی سعودی خاتون ہیں۔ جواہر العنزی نے اپنی کامیابی کی کہانی کی جڑیں اپنے اس بچپن سے منسوب کیں جو انہوں نے اپنے دادا کے ساتھ گزارا تھا۔ جب جواہر العنزی پانچ سال کی تھی تو اس نے ہکلانا شروع کر دیا تھا۔ اس کے بعد اس پر قابو پانے کے پروگراموں اور طریقوں کی بدولت اس نے ہکلانے کو کنٹرول کرنے کے نئے طریقے ایجاد کرلیے۔

وہ اس پر اب بھی کام کر رہی ہے۔ اس کا پروجیکٹ مائی چائلڈ کے نام سے ایک ایپلیکیشن بنانے کا ہے۔ یہ ایپ اپنے صارفین کو ہکلانے کے معاملے میں مدد کرتی ہے۔ ایپ "مائی چائلڈ" اپنے والد اور دادا سے متاثر کرداروں کو پیش کرتی ہے۔ ایپ صارفین کو ایسی مشقوں کے ذریعے رہنمائی کرتی ہے جو ان کی سانسوں کو کم کرنے اور انہیں حقیقی زندگی کے تجربات کے لیے تیار کرنے میں مدد کرتی ہیں۔ جواہر العنزی نے کلاس روم میں کہانی پڑھتے ہوئے ایسی آوازوں کو شامل کرنے کے لیے جو اس کے والد کے جملوں کو چھوٹے حصوں میں تقسیم کرنے کے طریقے کی نقل کرتی ہیں AVF Audio کا استعمال کیا۔

جواہر العنزی نے العربیہ ڈاٹ نیٹ سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ اپنے والد اور اپنے خاندان کی آنکھوں میں فخر کی جھلک دیکھ کر مجھے جو خوشی محسوس ہوتی ہے اسے بیان نہیں کیا جا سکتا۔ میرے پہلے حامی خاص طور پر میرے والد حمیدی شامان العنزی ہیں جنہوں نے ہکلانے پر قابو پانے کے لیے میرے سفر میں تعاون کیا۔

جواہر العنزی نے مزید کہا کہ ایپلی کیشن کا خیال یہ ہے کہ جملے کو الفاظ میں تقسیم کرنے کے طریقہ کار پر عمل کیا جائے تاکہ ہکلانے والے کے لیے ان کا تلفظ کرنا آسان ہو جائے۔ اس خیال کا خلاصہ میرے والد کے طریقہ کار کی تقلید میں ہے۔ اس سے میں ہکلانے پر قابو پا لیتی ہوں۔ اس نے آخر میں کہا کہ وہ اپنے شعبے میں خود کو مزید ترقی دینے اور اگلی نسل کو ٹیچنگ پروگرامنگ میں حصہ ڈالنے کے لیے مزید ایپلی کیشنز بنانے کی منتظر ہے۔ انہوں نے بتایا کہ وہ اپنی ایپ ’’ مائی چائلڈ‘‘ ایپ سٹور پر جاری کر رہی ہے اور ایسی مزید ایپس بھی بنائے گی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں