بیٹے کی سالگرہ کی تقریب پر 400 ڈالر خرچ، کسی نے شرکت نہ کی تو ماں رو پڑی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

ایک ماں جس نے اپنے بچے کی سالگرہ کی تقریب پر سیکڑوں ڈالر خرچ کرڈالے اس بات پر شدید غصے میں آگئی کہ اس کے والد اور بھائی سمیت بلائے گئے مہمانوں میں سے کوئی بھی سالگرہ کی تقریب میں نہیں آیا۔

امریکہ میں لاس ویگاس سے تعلق رکھنے والی انبر نے اپنے بیٹے کی سالگرہ کی تقریب کے لیے کیٹرنگ، سنیکس، بڑے کھلونے اور سجاوٹ کی اور اپنے گھر پر دوستوں اور خاندان کے افراد کو مدعو کیا اور سالگرہ کی تقریب پر بڑا خرچہ کیا تھا۔ پانچ بچوں کی والدہ مہمانوں پر تنقید کرنے کے لیے ٹِک ٹاک پر گئیں اور سالگرہ کے حوالے سے خاندان کو صورت حال سے آگاہ کیا۔

امریکی بچے کی برتھ ڈے پر کی جانے والی تیاریاں۔ تقریب میں کوئی نہ آیا
امریکی بچے کی برتھ ڈے پر کی جانے والی تیاریاں۔ تقریب میں کوئی نہ آیا

انبر نے اپنے اکاؤنٹ پر ایک ایک ویڈیو اپ لوڈ کی جس میں پارٹی کے دن اس کا سجا ہوا اور ویران گھر دکھایا گیا۔ اس کے ساتھ بچوں کے لطف اندوز ہونے کے لیے کھانے اور کھیل بھی دکھائے گئے ہیں۔ والدہ نے فوٹیج پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ جب میرے بیٹے کی سالگرہ کی تقریب میں کوئی نہیں آیا تو میں واقعی رو پڑی ، میں نے 400 ڈالر سے زیادہ کا خرچ کیا تھا۔

13 سیکنڈ کے کلپ کے پہلے حصے میں انبر اپنے بیٹے کے آنسو پونچھ رہی ہیں۔ ان کا بیٹا پارک کے ایک بینچ پر بیٹھا ہوا ہے۔ ماں نے کہا کہ میرا بیٹے کو بہت دکھ تھا کہ اس کی سالگرہ پر کوئی نہیں آیا۔ اس کے بعد انبر نے ایک بہت بڑا، رنگین کھلونا دکھایا۔ ایک سلائیڈ، گیند کے گڑھے، فرنیچر سے بندھے ہوئے گلابی اور پیلے رنگ کے غبارے اور کارٹون کرداروں والا بینر بھی دکھایا گیا۔

پھر ماں نے ویڈیو میں وہ کھانا دکھایا جو وہ مہمانوں کو پیش کرنے کا ارادہ رکھتی تھی۔ اس میں ناشتے سے بھری ایک پوری میز تھی جس پر مزیدار گوشت اور پنیر کی ایک پلیٹ بھی موجود تھی۔ کچن میں ماں کے پہلے سے آرڈر کیے گئے کھانے کی کئی ٹرے گرم کرنے کے لیے رہ گئی تھیں۔ کٹے ہوئے انناس، تربوز، آم اور سیب کی ٹرے بھی دکھائے گئے۔

بعد کی ایک ویڈیو میں ماں نے اپنے بیٹے کے پارٹی میں کسی کے نہ آنے کے مایوس کن تجربے کے پیچھے کچھ باریک تفصیلات کی وضاحت کی۔ ماں نے دعویٰ کیا کہ وہ توقع کر رہی تھی کہ سالگرہ کی تقریب میں دوپہر 2 بجے سے مہمانوں کی آمد شروع ہو جائے گی۔ مہمانوں کی "اکثریت" خاندان کے افراد کی تھی۔

انبر کا ایک دوست جوڑا تھا جنہوں نے اپنے بچوں کو اپنے ساتھ لانے کا منصوبہ بنایا تھا۔ تاہم شام 5 بجے تک کوئی بھی حاضر نہیں ہوا۔ کسی نے فون پر اس بات کی اطلاع دینے کی زحمت بھی گوارا نہیں کی کہ وہ نہیں آرہے۔

انبر نے مزید کہا کہ اس نے دن بھر غیر حاضر مہمانوں کو کال کرنے اور میسج کرنے کی کوشش کی لیکن اس کی کالز اور میسجز کو بھی نظر انداز کر دیا گیا۔ اس پوسٹ پر 8 ہزار سے زیادہ لوگوں نے تبصرے کئے اور ماں سے ہمدردی کا اظہار کیا۔ کچھ افراد نے اس حوالے سے اپنے تجربات بھی شیئر کئے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں