’’ ٹاپ گن‘‘ کا سٹنٹ کرتے ہوئے طیارہ تباہ، ایک پائلٹ جاں بحق، دوسرا زخمی

تربیتی طیارہ مکینیکل خرابی کی وجہ سے گرانے کا بیان، فوٹیج سے خطرناک کرتب کی کوشش لگ رہی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

بنگلہ دیش میں دو پائلٹ اپنے طیارے کو فلم ’’ٹاپ گن‘‘ جیسے کرتب کراتے دکھائی دئیے۔ تاہم اس "ٹاپ گن" والے سٹنٹ کا خاتمہ اس وقت ہوا جب یہ لڑاکا طیارہ کم اونچائی پر پرواز کرتا ہوا تین بار رن وے سے ٹکرا کر اچھلا اور تباہ ہوگیا۔ اس دوران ایک پائلٹ 32 سالہ محمد عاصم جواد جاں بحق ہوگیا اور دوسرا زخمی ہوا۔

Advertisement

نگران کیمرے کی فوٹیج میں دیکھا جا سکتا ہے کہ 9 مئی کو بنگلہ دیش کے چٹا گرام میں جواد کی جانب سے روسی ساختہ طیارے کو رن وے سے اٹھانے سے قبل اس میں سے دھواں اور چنگاریاں نکل رہی ہیں۔ طیارے کے پچھلے حصے میں پہلے ہی آگ بھڑک اٹھی تھی ۔ بنگلہ دیشی فضائیہ کے پائلٹ جواد اور ان کے ساتھی پائلٹ ونگ کمانڈر سوہان حسن خان طیارے سے باہر نکل گئے۔

مبینہ طور پر دونوں پائلٹ دریائے کرنافولی میں اترے اور انہیں فضائیہ اور بحریہ کے اہلکاروں اور مقامی ماہی گیروں نے زندہ بچا لیا لیکن جواد بعد میں ہسپتال میں دم توڑ گیا۔ سوچان حسن خان کی حالت تشویشناک ہے۔

بعد ازاں طیارے کو پانی سے نکال لیا گیا۔ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ تربیتی طیارہ مکینیکل خرابی کی وجہ سے گر کر تباہ ہوا۔ پائلٹوں نے طیارے کو ہوائی اڈے کے قریب گنجان آباد علاقے سے دور اس کم آبادی والے علاقے میں منتقل کردیا تھا۔ تاہم واقعے کی سی سی ٹی وی فوٹیج سے لگتا ہے کہ حادثہ انتہائی خطرناک حرکت کے باعث پیش آیا۔

فوٹیج سے پتہ چلتا ہے کہ دو پائلٹوں جنہوں نے دباؤ میں غیر معمولی مہارت کا مظاہرہ کیا جلتے ہوئے طیارے سے باہر نکلنے میں کامیاب ہوگئے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں