الیکٹرانک سگریٹ کی وجہ سے لڑکی کا پھیپھڑا پھٹ گیا، والد نے کہانی سنائی

2023 میں ای سگریٹ استعمال کرنے والے 11 سے 17 سال کے بچوں کی تعداد دوگنی ہوگئی: رپورٹ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

برطانوی شہری مارک بلیتھ اس وقت حیران رہ گیا جب اس نے اپنی 17 سالہ بیٹی کیلا کو مرگی کے دورے میں درد میں مبتلا دیکھا۔ لڑکی کو ہسپتال لے جایا گیا تو پتہ چلا کہ اس کا پھیپھڑا الیکٹرانک سگریٹ کی وجہ سے پھٹ گیا ہے۔ برطانوی اخبار میٹرو کے مطابق ڈاکٹروں نے والد کو آگاہ کیا کہ ان کی بیٹی کا ساڑھے 5 گھنٹے تک جاری رہنے والا ریسکیو آپریشن ہوا۔ الیکٹرانک سگریٹ کی شدید تمباکو نوشی کے باعث پھیپھڑوں کا کچھ حصہ پنکچر ہونے کے بعد نکال لیا گیا۔

ڈاکٹروں نے اس لڑکی کو سمجھایا کہ ضرورت سے زیادہ استعمال کی وجہ سے ہوا کا ایک چھوٹا سا چھالا پھٹ جاتا ہے جسے پلمونری بلب کہا جاتا ہے۔ پلمونری بلب کے پھٹنے کی وجہ سے اسے تقریباً فالج کا دورہ پڑا تھا۔

ڈاکٹروں کے اندازوں کے مطابق کائلہ ای سگریٹ کا استعمال کرتے ہوئے ایک ہفتے میں 400 سگریٹ کے برابر سگریٹ پیتی تھی۔

لڑکی کے والد نے کہا کہ جو ہوا اس نے مجھے خوفزدہ کردیا۔ میں ایک چھوٹے بچے کی طرح رونے لگا۔ میز پر اس کی نظر نے مجھے پھاڑ دیا۔ آپریشن کے دوران اسے مرگی کا دورہ بھی پڑا۔ میں نے سوچا کہ میں نے اپنی بیٹی کھو دی ہے۔ مجھے امید ہے کہ ہر کوئی تمباکو نوشی بند کردے گا۔ اس سگریٹ کا کوئی فائدہ نہیں۔

’’ایکشن آن سموکنگ اینڈ ہیلتھ‘‘ کے مطابق ای سگریٹ کی مقبولیت میں تیزی سے اضافہ ہوا ہے اور ان لوگوں کی تعداد جو کہتے ہیں کہ انہوں نے انہیں آزمایا ہے 2023 میں تقریباً 20 فیصد تک پہنچ گئی ہے۔ صحت عامہ کی ایک خیراتی تنظیم کے مطالعے سے معلوم ہوا ہے کہ 2023 میں ای سگریٹ استعمال کرنے والے 11 سے 17 سال کی عمر کے بچوں کی تعداد دوگنی ہو گئی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں