.

شاہ عبدالعزیز اپنے حج اخراجات غرباء میں بانٹ دیا کرتے تھے:دستاویز میں انکشاف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے بانی شاہ عبدالعزیز آل سعود عوام دوست فرمانروا تھے۔ ایک دستاویز میں انکشاف کیا گیا ہے کہ وہ حج پر جانے کی استطاعت رکھنے کے باوجود کم حج کرتے۔ بلکہ حج کے برابر اخراجات غریب شہریوں میں بانٹ دیتے تھے۔ یہ وہ وقت تھا جب سعودی عرب کے قومی خزانے میں تیل کی آمدن کی ریل پیل نہیں تھی۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق سعودی عرب کے بانی شاہ عبدالعزیز سے متعلق یہ دستاویز 1360ھ کی ہے جس میں ان کے حج نہ کرنے اور حج کے اخراجات کے برابر رقم غریب لوگوں میں بانٹنے کا اعلان کیا گیا تھا۔

مکہ معظمہ میں داخل ہونے کے بعد تیس سال تک شاہ عبدالعزیز نےصرف چھ سال کے سوا باقی سارے عرصے میں خود حج کی قیادت کی۔ وہ حج کے قافلوں کی آمد ورفت میں ذاتی طور پر گہری دلچسپی رکھتے تھے۔ سنہ 1342ھ اور 1343ھ کے دوران شاہ عبدالعزیز کی نگرانی میں حجاج کرام کے قافلے مکہ میں داخل ہوتے رہے۔ البتہ جب وہ خود حج کے عمل کی نگرانی نہ کر سکے تو یہ ذمہ داری ان کی نیابت میں شاہ فیصل بن عبدالعزیز نے نبھائی۔

شاہ عبدالعزیز آل سعود حج کے بعد طائف میں انتقال کر گئے تھے۔ اپنی وفات سے قبل بھی وہ حج امور کی دیکھ بحال کرتے۔ جب مرض بڑھ گیا تو انہوں نے حج کے امور کی نگرانی چھوڑ دی۔ سنہ 1373ھ کے حج کے بعد شاہ عبدالعزیز انتقال کر گئے۔ یہ سال سعودی عرب کے عوام نے لیے ’غم کا سال‘ قرار دیا جاتا ہے۔

مشہور مکتوب

شاہ عبدالعزیز کلچرل سینٹر کے ریکارڈ میں ایک ایک مکتوب کی نقل بھی محفوظ ہے۔ سنہ 1360ھ میں جاری اس مکتوب میں شہزادہ عبداللہ الفیصل نے لکھا ہے کہ اب شاہ عبدالعزیز حج کی قیادت کرتے ہیں اور نہ ہی خود حج کرتے ہیں بلکہ اپنے حج کےاخراجات کے برابر رقم ضرورت مند شہریوں میں تقسیم کر دیتے ہیں۔

القصیم کے گورنر شہزادہ عبداللہ بن الفیصل نے شاہ عبدالعزیز کے مذکورہ پیغام کے بارے میں اپنے بھائی محمد عبداللہ بن ربیعان کو لکھا کہ شاہ عبدالعزیز نے خود حج نہ کرنے اور حج کے اخراجات ضرورت مند شہریوں میں تقسیم کرنے کا اعلان کیا ہے۔ اس حوالے سے آپ کو بھی مطلع کیا جاتا ہے

اس کے علاوہ شاہ عبدالعزیز ہزاروں غریب شہریوں، جن کے پاس اپنی سواری نہیں ہوتی تھی، کے ساتھ حج کرتے۔

سعودی عرب میں 1344ھ کو پہلی بار مملکت میں گاڑی آئی۔ اس وقت گاڑیوں کی تعداد بہت کم تھی۔ اس سال شاہ عبدالعزیز نے حج کے سفر کے لیے چار کاریں استعمال کیں۔ زیادہ تر حجاج کرام اونٹوں پر تھے یا پیدل حج کر رہے تھے۔