.

آیئے! میدان عرفات اور جبل رحمت چلتے ہیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

حج سیزن کے دوران جبل رحمت اہم دینی سنگ میل کی حیثیت رکھتا ہے۔ نو ذی الحجہ کو حجاج کرام یہاں جمع ہو کر اللہ سے مغفرت اور رحم کے طلب گار ہوتے ہیں۔ اس کی سطح سمندر سے تین سو میٹر ہے۔ اس پر قائم مینار سات میٹر اونچا ہے۔ میدان عرفات منیٰ سے تقریباً دس کلومیٹر کے فاصلے پر واقع ہے جبکہ مزدلفہ سے اس کا فاصلہ چھ کلومیٹر ہے۔ میدان عرفات کی لمبائی 3.2 کلومیٹر جبکہ چوڑائی بھی اتنی ہی بیان کی جاتی ہے۔

’’العربیہ‘‘ کے نمائندہ خصوصی عبدالرحمان العصیمی کے مطابق سعودی حکومت نے میدان عرفات میں چار بڑے ہسپتال قائم کئے ہیں جبکہ اسی مقدس مقام پر 46 صحت مراکز بھی اللہ کے مہمانوں کی طبی ضروریات کا خیال رکھنے کے لئے قائم ہیں۔ ان میں طب کے مختلف شعبوں میں تخصص رکھنے والے سیکڑوں میڈیکل ٹیمیں ہمہ وقت موجود رہتی ہیں۔ حکومت نے میدان عرفات میں تین لاکھ نیم کے درخت لگائے ہیں۔ نیز دسیوں ہزاروں واٹر گنز کے ذریعے ٹھنڈی پھوار فراہمی کا بھی انتظام بھی پورے میدان عرفات میں کیا گیا ہے، جو حاجیوں کو گرد وغبار سورج کی تمازت سے بچانے میں مدد دیتے ہیں۔

میدان عرفات میں مسجد نمرہ کے ذکر کے بغیر یہاں موجود اہم دینی نشانیوں کا ذکر مکمل نہیں ہوتا۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی سنت پوری کرتے ہوئے اس میں نماز ظہر اور عصر قصر اور باہم ملا کر ادا کی جاتی ہے۔ مسجد میں ساڑھے تین لاکھ نمازی بیک وقت نماز ادا کر سکتے ہیں۔