حج 1443

پاکستانی عازمین کیلئے جمرات کے قریب اولڈ منیٰ میں جگہ حاصل کی ہے: ڈائریکٹر حج

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

حج مشن پاکستان کے مکہ میں ڈائریکٹر ساجد منظور اسدی کا کہنا ہے کہ مشن نے پاکستانی عازمین کے لئے جمرات کے قریب اولڈ منیٰٰ میں جگہ حاصل کی ہے۔

پاکستانی عہدیدار نے پاکستان کی سرکاری خبر رساں ایجنسی 'اے پی پی' سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ حاجیوں کو واپسی کیلئے پہلی مرتبہ روڈ ٹو مکہ پروجیکٹ کے تحت وطن واپسی کیلئے “ہوم چیک ان” کی سہولت دستیاب ہوگی۔ ماضی کی طرح انہیں سولہ سولہ گھنٹے پہلے ایئرپورٹ پہنچنے کی ضرورت نہیں ہوگی۔

انہوں نے کہا کہ منیٰ میں تمام پاکستانی عازمین کو جمرات کے قریب اولڈ منیٰ میں ٹھہرایا جائے گا اور وہاں پر انہیں کھانا فراہم کرنے کیلئے پاکستانی کیٹرنگ کمپنیوں کی خدمات حاصل کی گئی ہیں۔ رواں سال پہلی مرتبہ پاکستان حج مشن نے سعودی عرب کی موجودہ مارکیٹ کی صورتحال کو پاکستانی حاجیوں کے حق میں استعمال کرتے ہوئے سستی ترین سہولیات کی فراہمی کے حصول کو یقینی بنایا ہے۔

منظور اسدی نے کہا کہ ہم سعودی حکومت کے شکر گزار ہیں کہ جنہوں نے دنیا کے پانچ ممالک کو روڈ ٹو مکہ پروجیکٹ کی سہولت فراہم کی ہے اس میں پاکستان کے تین ہوائی اسلام آباد، لاہور اور کراچی شامل ہیں۔

حاجی اس سہولت کی بناء پر اس طرح سعودی عرب میں داخل ہوتے ہیں جس طرح کوئی ڈومیسٹک فلائٹ سے اپنے وطن میں سفر کرتا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ روڈ ٹو مکہ پروجیکٹ کے تحت اس مرتبہ ہمارے حاجیوں کو وطن واپسی کیلئے “ہوم چیک ان” کی سہولت دستیاب ہوگی جس کے تحت وطن واپسی کیلئے ایئر لائن کا عملہ ہمارے ہر حاجی کا سامان اس کی رہائش گاہ سے اٹھائے گا اور ہوٹل میں ہی بورڈنگ جاری کرے گا۔

منی میں اس مرتبہ ہمارے کل 6 مکاتب ہیں اور ہم نے اپنے حاجیوں کے لئے جمرات کے قریب اولڈ منیٰ میں خیمے حاصل کئے ہیں جس کی وجہ سے انہیں مناسک حج کی ادائیگی میں آسانی رہے گی اور ہمارے تمام حاجی ایک ساتھ اپنے ہم وطنوں کےساتھ قیام کر سکیں گے۔

کھانے پینے کی سہولیات کے حوالے سے ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ کھانوں کی تیاری میں سخت مانیٹرنگ کا نظام اختیار کیا گیا ہے جس کی وجہ سے ابھی تک بدہضمی یا گیسٹرو کا کوئی مریض حج میڈیکل مشن میں رپورٹ نہیں ہوا اور تین وقت کا کھانا حفظان صحت کے اصولوں کے تحت تیار کر کے حاجیوں کو فراہم کیا جارہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ابھی تک جو 5 اموات ہوئی ہیں وہ پہلے سے ہی بیمار تھے اور وہ اپنی طبعی موت کا شکار ہوئے۔ اسی طرح موثر ٹیسٹنگ کے نظام کی بدولت ہمارے کسی بھی حاجی میں بھی ابھی تک کرونا وائرس کی تشخیص نہیں ہوئی اور یہ صورتحال سعودی عرب میں پاکستان کیلئے نیک نامی کا باعث بنی ہے۔

انہوں نے اس توقع کا اظہار کیا کہ حج 1443 کے مناسک کی ادائیگی کیلئے عازمین حج کو کوئی مشکل پیش نہیں آئے گی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں