مسجد حرام میں ماحولیاتی نظام کی حفاظتی ترقیاتی خدمات میں غیر معمولی کامیابی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مسجد حرام میں حفاظتی خدمات کا نظام اس سال حج کے سیزن کے دوران ضیوف الرحمٰن کی خدمت میں اپنی شاندار کامیابی کا ثبوت پیش کررہا ہے۔ کیونکہ اس میں وہ انسانی اور تکنیکی صلاحیتیں موجود ہیں جو عالمی سطح پر کرونا وائرس کی وبا کے پھیلاؤ کی نگرانی کے ابتدائی لمحات سے شروع ہوئیں۔ اس نظام میں صدارت عامہ برائے امور حرمین شریفین کی جامع ترقیاتی تبدیلیوں کو مجسم کیا گیا ہے جوعالمی وبا کے غیر معمولی حالات کے دوران رونما ہوئی تھیں اور وبا کی روک تھام کے لیے احتیاطی تدابیر کے طورپر اختیار کیا گیا تھا۔

تب سے صدارت عامہ برائے امور حرمین شریفین کے سربراہ الشیخ ڈاکٹر عبدالرحمٰن بن عبدالعزیز السدیس نے "ماحولیاتی تحفظ اور وبائی امراض کے کنٹرول کا محکمہ" کے نام سے ایک محکمہ قائم کرنے کا فیصلہ جاری کیا۔ مسجد حرام کے فیلڈ ڈیپارٹمنٹس اور حجاج کی خدمت میں حصہ لینے والے سیکیورٹی اور صحت کے حکام کے ساتھ شراکت میں تمام احتیاطی اقدامات اور احتیاطی تدابیر کے اطلاق کا نقطہ آغاز ہوا۔

مسجد حرام میں ماحولیاتی تحفظ کی تمام خدمات میں مہارت رکھنے والی عوامی انتظامیہ میں تبدیل ہو گئی اور بہت سی انسانی اور مشینی صلاحیتوں سے لیس کیا گیا۔ ماحولیاتی تحفظ کے اس نظام کے لیے 650 سے زیادہ کارکنان اور 100 سعودی ملازمین کو مقرر کیا گیا۔ فی الحال ایک سال کے دوران مسجد حرام اور اس کی سہولیات میں جراثیم سے ماحول کو پاک کرنےکے آپریشنز کے نگران منصوبوں اور ایگزیکٹو پروگراموں کو نافذ کرنے کے لیے چوبیس گھنٹے کی بنیاد پرکام کر رہے ہیں۔مسجد حرام کے اندر ماحول کو پاک اور صاف رکھنے کے لیے 1300 آلات اور جراثیم کشی کے 650 موبائل پمپ فراہم کیے گئے ہیں، تاکہ مسجد کی سطح، قالینوں ، اندرونی مقامات اور مسجد کے صحن کوجراثیم سے پاک کیا جا سکے۔

مسجد حرام میں ماحولیاتی حفاظتی خدمات کی ترقی میں جدید تکنیکی ذرائع ایک لازمی عنصر کے طور پر ابھرے ہیں۔ ماحولیاتی حفاظت کی خاطر روبوٹ تیار کیے گئے ہیں جو مصنوعی ذہانت کے ساتھ کام کرتے ہیں اور ایک ہی وقت میں ایک سمارٹ ورک سسٹم کے ذریعے ماحول اور سطحوں کو جراثیم سے پاک کرتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں