حج 1444

اس سال حج کا خطبہ شیخ ڈاکٹر یوسف بن محمد دیں گے، تقرری کر دی گئی

شیخ ڈاکٹر ماھر بن حمد المعیقلی کو المسجد الحرام کے مبلغ اور احتیاطی امام مقرر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

حج کا رکن اعظم وقوف عرفہ منگل 27 جون کو ادا کیا جا رہا ہے۔ سال 1444 کے خطبہ حج کے لیے کبار علماء کونسل کے رکن شیخ ڈاکٹر یوسف بن محمد بن سعید کو مقرر کرنے کا اعلان کر دیا گیا۔

’’ھیئہ کبار العلماء‘‘ شیخ ڈاکٹر یوسف یوم عرفہ پر خطبہ حج دیں گے، جس کا ترجمہ اردو سمیت دنیا کی متعدد زبانوں میں براہ راست نشر کیا جاتا ہے۔ اس کے ساتھ شیخ ڈاکٹر ماھر بن حمد المعیقلی کو المسجد الحرام کے مبلغ اور احتیاطی امام کے طور پر مقرر کرنے کا اعلان بھی کیا ہے۔

شیخ ڈاکٹر یوسف بن محمد بن سعید کا مختصر سوانحی خاکہ

ڈاکٹر یوسف بن محمد بن سعید ’’امام محمد بن سعود اسلامی یونیورسٹی‘‘ میں عقیدہ ومعاصر ادیان کے پروفیسر کے عہدے پر فائز ہیں۔ وہ سائنسی کمیٹی برائے قومی تعلیم عامہ سے متعلق سمپوزیم کے چیئرمین اور "ویژن اور خواہشات" کے رکن بھی رہے ہیں۔

وہ پانچ سال یونیورسٹی کی مقالہ امتحانی کمیٹی کے رکن رہے۔ دو سال کے لیے یونیورسٹی کی ڈین شپ آف سائنٹفک ریسرچ کی کونسل کے رکن رہے۔ پوسٹ گریجویٹ سٹڈیز کی ڈین شپ کی کونسل کے رکن رہے۔ وہ 1415ھ سے امام محمد بن سعود اسلامی یونیورسٹی میں لیکچرر ہیں۔

شیخ ڈاکٹر یوسف بن محمد بن سعید امام محمد بن سعود اسلامی یونیورسٹی میں 1418 تا 141 ہجری شعبہ عقیدہ اور معاصر ادیان کے انڈر سیکرٹری کے عہدے پر بھی فائز رہے۔ 1419 ہجری میں امام محمد بن سعود اسلامی یونیورسٹی میں اسسٹنٹ پروفیسر بن گئے۔ 1423 سے لے کر 1425 ہجری میں وہ یونیورسٹی کے شعبہ عقیدہ و عصری مذاہب کے سربراہ بھی رہے۔ 1427 ہجری میں وہ امام محمد بن سعود یونیورسٹی میں ایسوسی ایٹ پروفیسربن گئے۔

شیخ یوسف نے ریاض میں امام ترکی بن عبداللہ مسجد کے سیمینارز اور ریاض کی مساجد کے اندر اور باہر متعدد لیکچرز اور سیمینارز میں شرکت کی ہے۔ انہوں نے وزارت اسلامی امور کے ساتھ درس و تدریس کے شعبے میں تعاون کرنے کے لیے ائمہ اور مبلغین کے کورسز میں بھی کام کیا۔

شیخ ڈاکٹر یوسف نے ریاض کے کالج آف فنڈامینٹلز آف ریلیجن سے بیچلر کی ڈگری حاصل کی۔ اس کے بعد انہوں نے 1415 ہجری میں ماسٹر کی ڈگری حاصل کی اور اس کے لیے انہوں نے مقالہ لکھا۔ ان کے مقالے کے عنوان "المسائل التي خالف فيها رسول الله صلى الله عليه وسلم أهل الجاهلية للإمام محمد بن عبدالوهاب ـ دراسة وتحقيقا وشرحا‘‘ تھا۔

1418ھ میں انہوں نے پی ایچ ڈی کی ڈگری مکمل کی۔ ڈاکٹریٹ کی ڈگری کے لیے ان کے لکھے گئے مقالے کا عنوان "آراء الفرق الإسلامية في كتب شيخ الإسلام ابن تيمية ومنهجه في عرضها ـ الجهمية والمعتزلة" تھا۔

شیخ ڈاکٹر یوسف نے متعدد سائنسی مقالوں کی نگرانی کی اور ان پر متعدد یونیورسٹیوں میں گفتگو کی ہے۔ ان یونیورسٹیوں میں امام یونیورسٹی، کنگ سعود یونیورسٹی، ام القریٰ یونیورسٹی، اسلامی یونیورسٹی مدینہ منورہ، وزارت تعلیم سے منسلک لڑکیوں کا کالج، طیبہ یونیورسٹی، دمام یونیورسٹی، شہزادی نورۃ بنت عبدالرحمن یونیورسٹی شامل ہیں۔ 2020 میں انہیں سینئر سکالرز کی کونسل کا رکن مقرر کرنے کا شاہی حکم جاری کیا گیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں