حج سیزن

حجاج کرام کی خدمت کے لیے خود کو وقف کرنے والے سعودی رضا کار باسل منصوری سے ملیے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سعودی عرب کے عوام وخواص عازمین حج کی خدمت کو اپنے لیے باعث فخر سمجھتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ ہرکوئی بڑھ چڑھ کرعازمین کی خدمت کے کار خیر میں اپنا حصہ ڈالنا چاہتا ہے۔

حج کے موقعے پر حجاج کرام کی مدد، ان کی رہ نمائی اور خدمت کے لیے خود کو وقف کرنے والوں میں ایک 24 سالہ باسل المنصوری بھی شامل ہیں۔ حج کا سیزن آتے ہی وہ اپنا گھر بار اور اہل وعیال چھوڑ کر حرم مکی میں ڈیرہ ڈال لیتے ہیں جہاں ان کا مشن عازمین کی خدمت کرکے اجرو ثواب کمانا ہوتا ہے۔

باسل منصوری نے سات سال پیشتر حجاج کرام کی خدمت اس وقت شروع کی جب وہ یونیورسٹی میں طالب علم تھے اور انہیں عازمین کی خدمت کے لیے رضا کاروں کی ٹیم میں شامل کیا گیا تھا۔

اس کے بعد انہوں نے حج کےموقعے پر حجاج کرام کی رضا کارانہ خدمت کو اپنا شعار بنا لیا ہے۔ انہوں نے صحت کے شعبے میں اپنی تعلیم مکمل کرنے کے ساتھ ساتھ اسی شعبے مین عازمین کی رہ نمائی اور خدمت کا مشن بھی جاری رکھا۔

رضا کار المنصوری کا کہنا ہے کہ "حاجیوں کی مسکراہٹیں اور ان کی دعائیں میرے لیے رضا کارانہ سرگرمیاں جاری رکھنے کا سب سے بڑا محرک ہیں"۔ المنصوری نے پین عرب روزنامہ ’الشرق الاوسط‘ کو دیے گئے ایک انٹرویو میں کہا کہ ’ہم عازمین کے ساتھ ساتھ چلتے ہیں۔ اگر دن کو منیٰ میں ہیں تو رات کو عرفات میں ہوتے ہیں‘۔

المنصوری کا کہنا ہے کہ انہوں نے ہنگامی طبی خدمات میں مہارت حاصل کی۔ اس کے بعد فیلڈ میں عازمین حج کو ہنگامی امداد فراہم کرنےاور ان کا علاج کرنے یا انہیں ہسپتال منتقل کرنے پر توجہ مرکوز کی ہے۔ انہیں گریجویشن کے بعد سعودی ریڈ کریسنٹ میں ایمبولینس کے ماہر کے طور پر ملازمت بھی مل گئی۔ وہ ان تمام معلومات اور تجربات کو عازمین کی رہ نمائی اور مدد میں استعمال کرتے ہیں۔

المنصوری اس سال تعلیمی امور کے نگران اور تربیتی ٹیم کے ایک رُکن کے طور پر حصہ لے رہے ہیں، جہاں وہ رضاکاروں کی نگرانی کرتے اور انہیں حجاج کو فیلڈ ہیلتھ سروسز فراہم کرنے کے لیے مدد کرتے ہیں۔ اس کے ساتھ ساتھ وہ اپنی ٹیم کو رضاکارانہ خدمات اور اپنے موجودہ شعبے سے حاصل کیے گئے تجربات سے آگاہ بھی کرتے ہیں۔

اس سال حج کے موقعے پر سعودی ہلال احمر کے عملے کے اندر 2,300 سے زیادہ مرد اور خواتین رضاکاروں کی خدمات انجام دے رہے ہیں، جس کا مقصد مقدس دارالحکومت، منیٰ، عرفات اور مزدلفہ میں ہنگامی خدمات کی سطح کو بڑھانا ہے۔

منیٰ میں عازمین حج کو صحت کی فول پروف سہولیات فراہم کی گئی ہیں۔ سعودی ہلال احمر اتھارٹی سے منسلک 97 ایمبولینس سینٹرز، 320 ایمبولینسز، 6 ایئر ایمبولینس طیارے، 9 موٹر سائیکلیں اور 4 گولف کارٹس کے علاوہ 4 طبی مراکز بھی موجود ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں