حج سیزن

حج 2023: عازمین کو دوران حج گرمی کی تھکن سے متعلق الرٹ جاری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

سعودی وزارت صحت نے حج کے دوران بڑھتے ہوئے درجہ حرارت کے باعث حجاج کرام کو گرمی کی تھکن کے بارے میں خبردار کیا ہے۔

سعودی پریس ایجنسی کے مطابق وزارت نے اس بات پر زور دیا کہ چھتریوں کا استعمال، زیادہ مقدار میں پانی پینا، جسمانی مشقت سے گریز، اور صحت کے رہنما اصولوں پر عمل کرنے سے حجاج کو ہیٹ اسٹروک یا گرمی کے دباؤ سے بچنے میں مدد مل سکتی ہے۔

حاجی دھوپ سےبچنے کےلیے چھتری کا استعمال کر رہا ہے
حاجی دھوپ سےبچنے کےلیے چھتری کا استعمال کر رہا ہے

گرمی کی تھکن شدید درجہ حرارت میں پانی کی کمی کی وجہ سے ہوتی ہے۔

اس کی علامات مختلف ہوتی ہیں اور ان میں الجھن، چکر آنا، بہت زیادہ پسینہ آنا، دل کی دھڑکن تیز ہونا، بے ہوشی، تھکاوٹ، سر درد، پٹھوں یا پیٹ میں درد، متلی، الٹی، اسہال، اور پیلی جلد شامل ہوسکتی ہے۔

بروقت طبی امداد نہ ملنے پر گرمی کی تھکن ہیٹ اسٹروک کا باعث بن سکتی ہے، جو دماغ اور دیگر اہم اعضاء کو نقصان پہنچا سکتی ہے، اور موت کا سبب بھی بن سکتی ہے۔

ایک گارڈ حاجی پرپانی کا اسپرے کر رہا ہے
ایک گارڈ حاجی پرپانی کا اسپرے کر رہا ہے

سعودی پریس ایجنسی نے اپنی پیر کی رپورٹ میں بتایا کہ ہیٹ اسٹروک کی صورت میں حجاج کرام کے لیے ہسپتال کے 217 بستر مختص کیے گئے ہیں۔

وزارت کے مطابق مقدس مقامات پر موجود سکیورٹی اہلکار اور رضاکار گرمی کی تھکن اور ہیٹ ویو کے معاملات سے نمٹنے کے لیے تربیت یافتہ ہیں۔

صدارت عامہ برائے حرمین شریفین نے اب تک 10,000 چھتریاں عازمین حج میں تقسیم کی ہیں۔

حاجیوں کے لیے تمام مقامات پر آب زمزم پینے کے لیے بھی دستیاب ہے۔

گارڈ حاجیوں پر پانی کا اسپرے کر رہا ہے
گارڈ حاجیوں پر پانی کا اسپرے کر رہا ہے

دنیا کا سب سے بڑا مذہبی اجتماع

حج بیت اللہ – دنیا کا سب سے بڑا مذہبی اجتماع ہے۔ جس میں ہر سال تقریباً 2.6 ملین مسلمان شرکت کرتے ہیں۔

کرونا وبا کے بعد پہلی بار، سعودی عرب نے افراد کی تعداد سے متعلق عائد تمام پابندیاں ختم کی ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں