صحن مطاف: عجلت میں لوٹنے والے حجاج کرام مکہ معظمہ کو کیسے الوداع کرتے ہیں؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

حجاج کرام فریضہ حج کی ادائی کے آخری مراحل میں مناسک ادا کررہے ہیں۔ جلدی واپس لوٹنے والے حجاج کرام نے آج جمعہ کو خانہ کعبہ کا الوداعی طواف کیا جسے اصطلاح میں ’طواف وداع‘ کہا جاتا ہے۔

حجاج کرام طواف وداع کے بعد مکہ معظمہ سے نکلتے ہوئے اللہ کے عظیم گھر پر آخری بار نگاہ ڈالتے ہیں۔ خانہ کعبہ کے آخری دیدار کے وقت حجاج کرام اللہ کے حضور سراپا تشکر ہوتے ہیں اور اللہ کی طرف سے اپنےگھر کی زیارت کا شرف بخشنے پرخوش بھی ہوتے ہیں اور اس سے دور ہونے کا قلق بھی لیے ہوئے سرزمین حرمین کو الوداع کرتے ہیں۔

اس میں کوئی شبہ نہیں کہ یہ اللہ کی طرف سے اپنے بندوں پر عظیم احسان ہے کہ اس نے انہیں اسلام کے پانچویں رکن کی ادائی کی توفیق بخشی۔ انہوں نے ایک ایسے وقت میں فریضہ حج ادا کیا جب سعودی عرب کی حکومت نے خادم حرمین شریفین ہونے کا کما حقہ حق ادا کیا ہے۔ حکومت نے حجاج کرام کے فریضہ حج کی ادائی کی سہولیات میں کوئی کسر باقی نہیں چھوڑی۔

ضیوف الرحمان سنت نبوی صلی اللہ علیہ وسلم کی پیروی کرتے ہوئے تینوں جمروں پر کنکریاں پھینکتے ہیں۔ سے سب سےپہلے جمرہ صغریٰ پر کنکریاں ماری جاتی ہیں۔ اس کے بعد جمرہ وسطیٰ اور آخر میں جمرہ عقبہ پر کنکریاں مارکر سنت نبوی ﷺ اور سنت ابراہیمی کو زندہ کیا جاتا ہے۔

حجاج کرام مسجد حرام میں طواف کرتے ہوئے۔ تصویر عبدالمحسن
حجاج کرام مسجد حرام میں طواف کرتے ہوئے۔ تصویر عبدالمحسن

رمی جمرات کے بعد جلدی لوٹنے والے حجاج کرام مسجد حرام کی طرف واپس آتے ہیں اور طواف وداع کرتے ہیں۔ جلدی واپس ہونے والے حجاج نے آج جمعہ کو طواف وداع کیا۔

عجلت میں واپس لوٹنے یا تاخیر سے واپس ہونے کے بارے میں فرمان باری تعالیٰ ہے کہ ’ اللہ کو گنتی کے دنوں میں یاد کرو، پس جس نے دو دن میں جلدی کی اس پر کوئی گناہ نہیں اور جس نے تاخیر کی اس پربھی کوئی گناہ نہیں۔ اس پر ان لوگوں کے لیے جو اللہ سے ڈرتے ہیں۔اور اللہ سے ڈرتےرہو اور جان لو کہ تم اسی کی طرف جمع کیے جاؤ گے‘۔

جو حجاج کرام تاخیر سے لوٹتے ہیں وہ ذی الحج کی 13 تاریخ تک رک سکتے ہیں۔ یہ حجاج کرام بھی رمی جمرات کریں گے اور اس کے بعد طواف وداع کے لیے مسجد حرام کی طرف روانہ ہوجائیں گے۔

طواف وداع کے بعد حجاج کرام اپنے اپنے ملکوں کو واپس چلے جاتے ہیں۔ طواف وداع حجاج کی طرف سے فریضہ حج کی ادائی کے آخر میں اللہ کے عظیم حکم کی تعمیل پر پروردگار کے شکر کے طور پر کیا جاتا ہے۔ اس موقعے پر حجاج کرام فریضہ حج کی ادائی پر اپنے رب کا شکر ادا کرتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں