.

ہوا کے باعث فضا سے سپر سانگ جمپ کا پر خطر مشن مؤخر

ساؤنڈ بیریئر توڑ کر ریکارڈ بنانے کی کوشش

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
آسٹریا کے مہم جُو فیلکس بام گارٹنر کا فضاء سے چھیتس ہزار میٹر کی بلندی سے چھلانگ لگانے کا پر خطر مشن تیز ہوا کے باعث مؤخر کر دیا گیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق مہم جو فیلکس بام نے ہوا کا دباؤ برداشت کرنے کی صلاحیت کے حامل ہیلیم گیس کا ایک خول نما لباس پہن کر فضاء سے زمین پر 36 ہزار 576 میٹر کی بلندی سے منگل کی شب چھلانگ لگانا تھی۔

تینالیس سالہ فیلکس جو پچھلے کئی سال سے فضاء سے زمین پر چھلانگ لگانے کی طویل ریاضت بھی کر چکا ہے۔ چھلانگ لگانے کے بعد وہ ہزاروں میٹر پیرا شوٹ کے بغیر فری فال کا مظاہرہ کرے گا۔ اس کی کوشش ہے کہ وہ سطح زمین سے محض 1500 میٹر کی بلندی سے اپنا پیرا شوٹ کھولے۔

ماہرین کے مطابق فیلکس اگر فضاء سے زمین کی طرف 12276 کلو میٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے نیچے آیا تو اس کی یہ رفتار بندوق سے نکلی گولی کی رفتار کے برابر ہو گی۔ اس تیزی کے ساتھ اسے کئی قسم کے خطرات کا بھی سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔ عین ممکن ہے کہ فضاء سے زمین کی طرف گرتے ہوئے وہ اپنے حواس پر قابو نہ رکھ سکے اور وقت مقررہ پر پیرا شوٹ نہ کھول پائے۔ اگر ایسا ہوا تو فیلکس کی جان بھی جا سکتی ہے۔ فیلکس گارٹنر کا اپنا دعویٰ یہ ہے کہ وہ فضاء کی بلندی سے چھلانگ لگاتے ہوئے اپنا ذہنی توازن بحال رکھنے کا تجربہ کرنے میں کامیاب ہو جائے گا۔

فیلکس کی فضاء سے زمین پر چھلانگ لگانے کا اہتمام کرنے والی آسٹرین کمیٹی 'ریڈل پول سٹراٹس' پر امید ہے کہ فیلکس کی یہ چھلانک خلائی سائنس کی کئی نئی جہتوں میں تحقیقات کے باب کھولنے کا موجب بنے گی۔

اس منظر کو العربیہ کے مادر گروپ ایم بی سی سے وابستہ ایم بی سی ایکشن براہ راست نشر کرے گا۔ ایم بی سی ایکشن دنیا کے ان چار چینلز میں شامل ہے کہ جنہیں اس تاریخی لمحے کو براہ راست نشر کرنے کی اجازت دی گئی ہے۔ واضح رہے کہ کسی حادثے کے خطرے کے پیشِ نظر ناظرین کو بیس سیکنڈ کے توقف سے یہ نشریات دیکھنے کو ملیں گی۔