.

عجائب دنیا القاعدہ کو صنم خانے سے پاسبان ملنے لگے؟

مالی میں 'فرانسیسی مجاہد' کی ویڈیو کا اجراء

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
سماجی رابطوں کی ویب سائٹ پر پوسٹ کی جانے والی ایک حالیہ ویڈیو میں فرانسیسی 'جہادی' اپنے ملک اور مغرب کو دھمکی آمیز لہجے میں مخاطب کرتے دیکھا جا سکتا ہے۔

مبصرین ویڈیو کو القاعدہ کی تنظیم میں ندرت سے تعبیر کر رہے ہیں کہ جو اس بات کا ثبوت ہے کہ القاعدہ اپنی صفوں میں عربوں اور مسلمانوں کے علاوہ یورپی افراد کو بھی بھرتی کرنے میں کامیاب ہوتی نظر آ رہی ہے۔

یہ ویڈیو ایک ایسے وقت سامنے آئی ہے کہ جب "فرانس انٹر" ریڈیو کی ویب سائٹ پر جاری ایک تصویر میں دو یرغمال فرانسیسی شمالی مالی میں جہادیوں کے جلو میں دیکھے جا سکتے ہیں۔ اس تصویر کی اشاعت پر فرانس میں پہلے ہی کافی شور مچ رہا ہے۔

ادھر اقوام متحدہ کی بین الاقوامی سلامتی کونسل نے جمعہ کے روز ایک قرارداد پاس کی ہے جس میں مغربی افریقہ کے ممالک سے مطالبہ کیا گیا ہے کہ وہ شمال مالی کو انتہا پسند مسلمانوں سے پاک کرانے کے لئے اپنے لائحہ عمل واضح کریں۔

فرانس کی تیارکردہ قرارداد میں مطالبہ کیا گیا ہے اس ضمن میں مالی حکومت اور ان کے مخالفین سے بھی رابطہ کیا تاکہ سنجیدہ مذاکرات کا دور شروع کیا جا سکے۔

یاد رہے شمال مالی میں جہادی گروپوں نے فرانسیسی اور الجزائری شہریوں کو الگ الگ یرغمال بنا رکھا ہے۔ الجزائر اپنے سفارتکاروں کی پرامن رہائی چاہتا ہے۔ ایک یرغمالی الطاہر تواتی کو اغوا کار ہلاک کر چکے ہیں جبکہ پیرس نے معاملے سے جان خلاصی کے لئے فوری فوجی کارروائی کا بھی عندیہ دیا ہے۔

ویڈیو میں فرانس اور مغرب کو مخاطب کرنے والا فرانسیسی 'مجاہد' اپنا تعارف عبدالجلیل کے نام سے کراتا ہے۔ اس ویڈیو کو موریتانیہ کے "میڈیا ڈیزرٹ" نامی ویب پورٹل نے حاصل کیا، جسے بعد میں یو ٹیوب پر اپ لوڈ کر دیا گیا۔ عبدالجلیل فرانسیسی صدر فرانسو اولاند کو خبردار کرتا ہے کہ اپنے شہریوں کو رہا کرانے کے لئے شمال مالی کے خلاف فوجی کارروائی کے خطرناک نتائج نکلیں گے۔

عبدالجلیل نے صدر اولاند کو ان کے انتخابی وعدے یاد دلاتے ہوئے کہا کہ وہ ماضی میں نے نیٹو کے فیصلوں سے دست کشی کا عندیہ دے چکے ہیں جو ان کے بہ قول امریکا، اسرائیل کی سیاسی اور اقتصادی پالیسیوں کے بڑھاوے کا باعث بن رہے ہیں۔ انہوں نے فرانسیسی عوام پر زور دیا کہ وہ مالی کے خلاف فوجی ایکشن کی مخالفت کریں کیونکہ ایسا کوئی بھی ایکشن ان کے مفاد میں ںہیں ہو گا۔

فرانسیسی جہادی نے اس بات پر حیرت کا اظہار کیا کہ فرانس، امریکا اور یو این 'مجاہدین ساحل' کو اسلامی شریعت نافذ کرنے کی سزا دینے کے در پے ہیں جبکہ بشار الاسد جیسے 'قاتل اور مجرم' انہیں نظر نہیں آتے۔

انہوں نے کہا دنیا اور اس کی قیادت امریکا اور اسرائیل کو 'دو سروں والے سانپوں' کے طور پر جانتی ہے۔ عبدالجلیل نے ویڈیو میں اسامہ بن لادن کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہ انہوں نے گیارہ ستمبر 2001ء میں ایک سانپ کے سرکچل دیا تھا۔

واضح رہے کہ عبدالجلیل گزشتہ دو برسوں سے اپنی اہلیہ اور پانچ بچوں سمیت ٹمبکٹو میں قیام پذیر ہے۔ انہوں نے تین سال مرچنٹ نیوی میں خدمات سرانجام دیں اور اس دوران پوری دنیا پھری ہے۔ نیز وہ 'ڈاکٹرز ودھ آؤٹ بارڈرز' سے بھی وابستہ رہے ہیں۔