.

شامی فضائی حدود ترک ایئر ٹریفک کے لیے نو فلائی زون

'جیسی کرنی، ویسی بھرنی'

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
شام نے ترکی کے ساتھ براہ راست رابطوں کے علی الرغم اپنی فضائی حدود میں ترک طیاروں کے داخلے پر پابندی لگاتے ہوئے اسے نو فلائی زون قرار دیا ہے۔ دمشق حکومت کے مطابق یہ اقدام شامی مسافر طیارے کو انقرہ میں زبردستی اتارنے کے ردعمل کے طور پر اٹھایا ہے۔

شام کی سرکاری خبر رساں ایجنسی"سانا' نے وزارت خارجہ کا ایک بیان شائع کیا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ ترکی کے ہوائی جہازوں کو آئندہ شامی فضائی حدود استعمال کرنے کی اجازت نہیں ہو گی۔ دمشق نے یہ اقدام انقرہ کے ایسے ہی ایک فیصلے کے جواب میں کیا ہے، جس میں شامی ہوائی جہازوں کے ترک فضائی حدود میں داخلے پر پابندی عائد ہے۔

شامی وزارت خارجہ نے ترک فضائی حدود کو شامی ایئر ٹریفک کے لئے بند کرنے کے فیصلے کو افسوسناک قرار دیا۔ بیان کے مطابق مسافر طیاروں کو روک کر انقرہ نے شامی عوام سے دشمنی کا ثبوت دیا ہے۔ ترکی کے اس اقدام سے ظاہر ہوتا ہے کہ انقرہ کو صرف دمشق حکومت سے پرخاش نہیں بلکہ شامی عوام کو بھی انقرہ اپنا دشمن خیال کرتا ہے۔

خیال رہے کہ شام نے اپنی فضائی حدود کو ترکی کے ہوائی جہازوں کے لیے بند کرنے کا اعلان ایک ایسے وقت میں کیا ہے جب دمشق نے ترک حکومت کے ساتھ براہ راست رابطے بحال کرنے کے لیے ایک کمیشن کے قیام کے لیے بھی مساعی تیز کی ہیں۔ مبصرین کے مطابق ایسے انتقامی اقدامات سے سرحدی سیکیورٹی کو کنٹرول کرنے سے متعلق مجوزہ کمیشن کے قیام کی مساعی مؤثر ثٓابت ہوتی دکھائی نہیں دیے رہی ہے۔