.

طرابلس کی جیل سے 100 قیدی جیل توڑ کر فرار

امن و امان قائم کرنے کی تمام امیدیں نئے وزیر اعظم سے وابستہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
لیبیا سے العربیہ کے نامہ نگار نے اپنے مراسلے میں بتایا ہے کہ دارلحکومت طرابلس کی الجدیدہ جیل سے تقریباً ایک سو قیدی جیل توڑ کر فرار ہو گئے۔

مصطفی عبدالجلیل کی قیادت میں ماضی میں عبوری کونسل ملک میں سرگرم متعدد ملیشیاؤں کو قومی پرچم تلے جمع کرنے کے لئے کوشاں رہے ہیں تاکہ ملک میں امن و امان کی مکدر صورتحال کو کنڑول کیا جا سکے۔

لیبیا میں نئے وزیر اعظم کے انتخاب کے بعد صورتحال میں بہتری کی ساری امیدیں اب ان سے وابستہ کی جا رہی ہیں۔

نئے لیبی رہ نما علی زیدان کو مصطفی ابو شاقور کی جگہ ملک کا سربراہ منتخب کیا گیا ہے۔ ابو شاقور نیشنل کانگریس سے مسلسل دو مرتبہ اعتماد کا ووٹ حاصل کرنے میں ناکام رہے۔

جنوبی لیبیا میں ان دنوں بعض قبائل اور مسلح ملیشاؤں کے درمیان جھڑپوں میں فریقین کے دسیوں افراد جان سے ہاتھ دھو بیٹھے ہیں۔