.

بنغازی قونصل خانے کی ناکافی سیکیورٹی میرا قصور ہے ہیلری

بیان نے اوباما اور بائیڈن کو 'کلین چٹ' دے دی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
امریکا میں صدارتی امیدواروں کے درمیان مناظرے کے دوسرے مرحلے سے قبل وزیر خارجہ ہیلری کلنٹن نے ایک دھواں دار بیان دیکر صدر براک اوباما اور ان کے نائب جو بائیڈن کو بے گناہ ثابت کرنے کی کوشش کرتے ہوئے کہا ہے کہ "بنغازی میں امریکی قونصل خانے کی نامناسب سیکیورٹی کی ذمہ داری ان پر عائد ہوتی ہے"۔

صدارتی امیدواروں کے درمیان مناظرے کے دوسرے مرحلے میں زیادہ تر توجہ امریکی قونصل خانے پر حملے اور اس میں امریکی سفیر سمیت چار دیگر اہلکاروں کی ہلاکت پر مرکوز رہنے کا امکان ہے۔

پیرو کے دارلحکومت لیما میں ہیلری کلنٹن نے امریکی ٹی وی نیٹ ورک 'سی این این' اور 'فاکس نیوز' کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا کہ "گیارہ ستمبر کو بنغازی میں امریکی قونصل خانے پر حملے کی ذمہ داری مجھ پر عائد ہوتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ میری زیر نگرانی میں دنیا بھر میں امریکی وزارت خارجہ سے ساٹھ ہزار افراد وابستہ ہیں۔ یہ افراد 275 سفارتی مشنز اور قونصل خانوں میں اپنی خدمات سر انجام دے رہے ہیں۔ انٹرویو میں اعلی امریکی سفارتکار نے مزید کہا کہ ماضی میں بھی صدر براک اوباما یا ان کے نائب جو بائیڈن امریکی قونصل خانوں کے تحفظ کی خاطر کسی قسم کے اقدامات نہیں کئے، اس لئے ان پر بنغازی قونصل خانے کی ناقص سیکیورٹی کی ذمہ داری ڈالنا مناسب نہیں۔

امریکا میں صدارتی انتخاب کا مرحلہ جوں جوں قریب آ رہا ہے، اسی تناسب سے لیبی شہر بنغازی میں امریکی قونصل خانے پر حملے کا معاملہ سیاسی منظر نامے پر نمایاں ہو رہا ہے۔ صدر براک اوباما کے سیاسی حریف اور ڈیموکریٹ امیدوار مٹ رومنی اپنے بیانات میں ان پر بیرون ملک سفارتی مشنز کی ناکافی سیکیورٹی کے الزامات عائد کرتے چلے آ رہے ہیں۔