.

مالی کے شاہ مانسا موسیٰ 700 برس بعد بھی دنیا کی امیر ترین شخصیت

روتھ چائلڈ 350 ارب ڈالرز کے ساتھ دوسرے امیر ترین

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
زمانے کے نشیب و فراز کے ساتھ لوگوں کی دولت وثروت گھٹی بڑھتی ہے لیکن افریقہ کے ایک غریب ملک مالی کے بادشاہ مانسا موسیٰ کی دولت مندی کا ان کے دنیا سے چلے جانے کے 700 سال بعد بھی ریکارڈ نہیں توڑا جا سکا ہے۔ یوں منسا موسیٰ آج بھی دنیا کے امیر ترین شخص ہیں۔



العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق دنیا میں دولت مند اور با اثر شخصیات کے بارے میں معلومات جمع کرنے والی ویب سائٹ 'سلیبرٹی نیٹ ورتھ' نے اپنی حالیہ رپورٹ میں ماضی اور حال کے دولت مندوں کی ایک فہرست مرتب کی ہے۔

فہرست میں چودہویں صدی عیسوی کے دوران مالی کے بادشاہ مانسا موسیٰ 400 ارب ڈالرز کے مالک تھے۔ آج تک ان کے اس دولت کا ریکارڈ نہیں توڑا جا سکا ہے۔ البتہ آج ان کے ملک کی حالت نہایت ناگفتہ بہ ہے، جہاں ہزاروں بچے ہرسال بھوک اور ننگ کے باعث ہلاک ہو جاتے ہیں۔ جہاں پچھلے کئی ماہ سے شدت پسند مذہبی تنظیموں کی اجارہ داری ہے، جن کےخلاف اقوام متحدہ کے پرچم تلے عالمی امن کے ٹھیکیدار ایک بڑے فوجی آپریشن کی تیاری بھی کر رہے ہیں۔



ابن بطوطہ، ابن خلدون اور العمری جیسے مسلمان مؤرخین نے بھی شہنشاہ مالی کے بارے میں اپنی کتابوں میں تفصیل سے لکھا ہے۔ مورخین کا کہنا ہے کہ مانسا موسیٰ محض کوئی افسانوی کردار نہیں بلکہ ایک حقیقی بادشاہ اور امیرترین شخص گذرا ہے۔ اس کی دولت وثروت کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہےکہ سنہ 1324ء میں اس نے اپنےملک کے 60 ہزار افراد کے ہمراہ حج کا سفر کیا تھا۔ ان میں سے بارہ ہزار افراد کو کئی ٹن سونا اور ہیرے جواہرات اٹھوائے گئے تھے، وہ جہاں جاتے سونے اور ہیروں کے انبار لگا دیتے، جس کے باعث ان کے راہ میں آنے والے شہروں میں سونے کی اتنی ریہل پہل ہوگئی کہ کئی سال تک سونے کی قیمیتں نچلی ترین سطح پرآ گئی تھیں۔



اخبار الشرق الاوسط نے بھی سلیبرٹی نیٹ ورتھ کی رپورٹ پر روشنی ڈالی ہے۔ اخبار لکھتا ہے کہ دنیا کے دولت مند افراد کی فہرست میں شہنشاہ مالی مانسا موسیٰ آج بھی دنیا کے امیر ترین شخص ہیں کیونکہ کوئی شخص یا خاندان ان کے مجموعی اثاثوں کے برابر نہیں پہنچ سکا ہے۔ یورپین بنکنک سے وابستہ روتھ چائلڈ 350 ارب ڈالرز کے ساتھ دوسرے نمبر پر ہیں۔ روتھ چائلڈ 18 ویں صدی عیسوی میں یورپ کے امیر ترین شخص مانے جاتے تھے۔ آج ان کی جائیداد انہی کے خاندان میں منقسم ہے۔



امریکی جون روک فیلر ماضی اور حال کے تیسرے امیر ترین شخص ہیں۔ وہ 1839ء میں پیدا ہوئے اور 1937ء میں وفات پائی۔ ان کے مجموعی اثاثوں کی مالیت340 ارب ڈالرہے۔ ایک دوسرے اسکاٹ لینڈین نژاد امریکی آنڈرو کارینگی 310 ارب ڈالرز کے ساتھ چوتھے نمبرپرہیں۔



سیلیبرٹی نیٹ کی رپورٹ کے مطابق خود کو ’شہنشاہ افریقہ‘ قرار دینے والے مقتول لیبیائی لیڈر کرنل معمر قذافی 200 ارب ڈالرز کے اثاثوں کے ساتھ آٹھویں امیر ترین شخص ہیں۔ امریکی بزنس جریدے'فوربز' کی رپورٹ کے مطابق امریکی سافٹ ویئر کمپنی کے بانی بل گیٹس 136 ارب ڈالرز کے اثاثوں کے ساتھ بارہویں، میکسیکو کے لبنانی نژاد کارلوس سلیم حلو 68 ارب ڈالرز کے ساتھ بائیسویں اور امریکی وارن بافیٹ 64 ارب ڈالرز کے ساتھ پچیسویں امیر ترین شخص ہیں۔