.

اٹلی سابق وزیر اعظم برلسکونی کو ٹیکس فراڈ پر چار سال قید

آف شور کمپنیوں کے نام پر ٹیکس بچانے کا الزام ثابت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
اٹلی کے شہر میلان کی ایک عدالت نے سابق وزیر اعظم سلویو برلسکونی کو ان کے ٹیلی ویژن چینل میڈیا سیٹ سے متعلق ٹیکس فراڈ کے ایک مقدمے میں چار سال عمر قید کی سزا سنائی ہے اور ان پر تین سال کے لیے کوئی بھی سرکاری عہدہ رکھنے پر پابندی عاید کر دی ہے۔

سلویو برلسکونی اس عدالتی فیصلے کے خلاف دو اپیلیں دائر کر سکتے ہیں اور ان کی حتمی اپیل مسترد کیے جانے تک اس سزا پر عمل درآمد نہیں کیا جاسکے گا۔استغاثہ نے عدالت سے انھیں تین سال اور آٹھ ماہ قید کی سزاسنانے کی اپیل کی تھی۔عدالت نے برلسکونی اور ان کے شریک مدعا علیہان کو ایک کروڑ یورو کی رقم ہرجانے کے طور پر ٹیکس حکام کو ادا کرنے کا بھی حکم دیا ہے۔

پراسیکیوٹر فابیو ڈی پاسکل نے جون میں کہا تھا کہ میڈیا سیٹ نے فلموں کی لاگت کے بارے میں مبالغہ آرائی سے کام لیا تھا اور اس نے 1994ء سے 1998ء کے درمیان چھتیس کروڑ اسی لاکھ ڈالرز اور 2001ء سے 2003ء تک چار کروڑ یورو لاگت بیان کی تھی۔

ڈی پاسکل نے تب قرار دیا تھا کہ برلسکونی سن 1998 ء تک ٹیلی ویژن کے حقوق کے سیکٹر میں چین آف کمان میں سرفہرست تھے۔اٹلی کے سابق وزیر اعظم نے صرف دو روز قبل ہی اپنی جماعت پیپلزآف فریڈم پارٹی (پی ڈی ایل) کے لیڈر کے طور پر آیندہ سال عام انتخابات میں حصہ نہ لینے کا اعلان کیا تھا۔

برلسکونی اور میڈیا سیٹ کے دوسرے ایگزیکٹوز کے خلاف ٹی وی کے حقوق کے لیے آف شور کمپنیوں کے نام پر ادا کردہ رقم کے بارے میں مبالغہ آمیزی سے کام لینے کے الزام میں مقدمہ چلایا گیا ہے۔انھوں نے اس رقم کو غیر قانونی فنڈز قائم کرنے کے لیے استعمال کیا تھا۔ ان کے خلاف امریکی گروپوں سے آف شور کمپنیوں کے نام پر ٹیلی ویژن اور سینما کے حقوق حاصل کرنے کے الزام میں تحقیقات کی گئی تھی۔

چھہتر سالہ سابق وزیراعظم کے خلاف میلان کی ایک اور عدالت میں ایک کم عمر داشتہ کو ناجائز جنسی تعلقات کے لیے رقم دینے کے الزام میں الگ سے مقدمہ چلایا جا رہا ہے۔

پی ڈی ایل کے سیکرٹری اینجلینو الفانو نے عدالت کے فیصلے پر تبصرہ کرتے ہوئے اسے میڈیا میگنیٹ کے خلاف عدالتی ہراسیت قرار دیا ہے جبکہ سلویو برلسکونی کے سیاسی حریف انٹونیو ڈی پائٹرو نے فیصلے کو سراہا ہے اور کہا ہے کہ سچ ایک مرتبہ پھر کھل کر سامنے آگیا ہے۔