لندن سے ایرانی اپوزیشن ٹی وی چینل رھا کا اجرا

'چینل آزادی اور جمہوریت کے لئے کام کرے گا'

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
5 منٹس read

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق ایرانی کاروباری شخصیت جاہنشانی کے ملکیتی 'رہا' ٹی وی چینل کے ایران میں موجود تمام نامہ نگار خفیہ ذرائع سے رپورٹنگ کریں گے۔ ٹی وی کی آواز کو مؤثر بنانے کے لیے اس کی ایک ویب سائٹ بھی بنائی جائے گی، جہاں ٹی وی پر نشرخبروں کے علاوہ بھی تجزیاتی رپورٹیں شائع کی جائیں گی۔

'رھا' کے منیجنگ ڈائریکٹر اصغر رامز انبور نے العربیہ سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ایران میں اس وقت 19 سرکاری چینلز کام کر رہے ہیں۔ ایسے میں وہ ایک نئے ٹی وی چینل کو ان نشریاتی اداروں کے خلاف جنگ کے لیے لانچ کر رہے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ ایران میں ہمارے نامہ نگار اور فوٹو گرافرز خفیہ ذرائع سے رپورٹنگ کریں گے اور عوام کے سامنے اصل منظر نامہ پیش کریں گے۔

اصغر رامز انبور نے مزید کہا کہ انہوں نے ٹی وی کی آزمائشی نشریات چند ہفتے قبل شروع کی تھیں لیکن ایرانی حکومت کی جانب سے شہریوں کو چینل تک رسائی سے روکا جا رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ وہ ایران میں آزادی اور جمہوریت کا عزم لے کر حکومتی میڈیا کے خلاف اعلان جنگ کر چکے ہیں۔ اب وہ اس جنگ کو جیت کر دکھائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ وہ اپنے مقاصد کے حصول کے لیے ’’بی بی سی فارسی‘‘ سمیت کئی دوسرے آزاد ٹیلی ویژن چینلوں سے مدد حاصل کریں گے اور مل کر ایران میں نظام کی تبدیلی کے لیے فضاء ہموار کریں گے۔

العربیہ ٹی وی کو اپنے ذرائع سے اطلاع ملی ہے کہ برطانیہ ہی سے ایرانی اپوزیشن 'الغد' کے نام سے ایک دوسرے ٹیلی ویژن چینل کی نشریات کو بھی جلد از جلد شروع کرنے والی ہے۔ ممکن ہے کہ 'الغد' پیش آئند موسم گرما میں ہونے والے ایرانی صدارتی انتخابات سے قبل ہی اپنی نشریات شروع کر دے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں