.

سوگ کے دوران شراب نوشی، شمالی کوریا کے وزیر کو سزائے موت

نائب وزیر دفاع کو 'ہاون' راکٹ سے ہلاک کیا گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
شمالی کوریا کے نوجوان حکمران کے ایماء پر فوج کے نائب وزیر اون کم چل کو سزائے موت سنائی گئی ہے۔ سزا پر عمل درآمد پھانسی یا فائرنگ اسکواڈ کے ذریعے پورا نہیں کیا گیا بلکہ صدر کے حکم پر وزیر دفاع کو 'ہاون' راکٹ سے اڑایا گیا۔

جنوبی کوریا کے ذرائع ابلاغ میں چھپنے والی خبر کے مطابق اون کم چل کو راکٹ مار کر سزائے موت دی گئی۔ ان پر الزام تھا کہ انہوں نے ملک کے آنجہانی سربراہ کم جونگ ایل کے انتقال پر سرکاری سوگ کی مدت کے دوران مسلسل شراب نوشی جاری رکھی۔

جنوبی کوریا سے شائع ہونے والے اخبار 'چوژن ایلبو' کے مطابق شمالی کوریا کے نائب وزیر دفاع کم چل کو جنوری میں ہاون راکٹ سے نشانہ بنا کر فنا کے گھاٹ اتارا گیا۔

اخبار کے مطاطق کم چل کو ہاون راکٹ سے نشانہ بنانے کا فیصلہ اس لئے کیا گیا کہ اس کی نعش کا کوئی ٹکڑا بھی نہ مل سکے۔ کم چل کو حالیہ صدر کم جونگ اون کے حکم پر پہلے بھی گرفتار کیا جا چکا ہے۔

شمالی کوریا کے نائب وزیر دفاع کو سزائے موت دراصل حکومت اور سرکاری عہدیداروں کو فنا کے گھاٹ اتارنے کے سلسلے کی تازہ ترین کارروائی تھی۔ اس سے قبل چودہ اعلی حکومتی عہدیدار موجودہ نوجوان صدر کے حکم پر پھانسی پا چکے ہیں۔ ان میں فوج کے سربراہ ری جونگ ہو، شمالی کوریا کے اسٹیٹ بینک کے صدر ری کوانگ جون بھی شامل ہیں۔

یاد رہے کہ شمالی کوریا کے آنجہانی سربراہ کم جونگ ایل گزشتہ برس دسمبر میں انتقال کر گئے تھے۔ انہوں نے اپنے والد کم ایل سونگ کے انتقال کے بعد شمالی کوریا پر سترہ برس حکمرانی کی۔