.

ہالی وڈ فنکاروں کے ذریعے اوباما کے اپنے حریف پر حملے

انتخاب سے 3 دن قبل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
امریکا میں صدارتی انتخاب سے تین دن پہلے ڈیموکریٹ امیدوار براک اوباما اور ری پبلیکن مٹ رومنی ہالی وڈ کے اداکاروں کی حمایت حاصل کرنے میں سرگرداں نظر آتے ہیں، تاہم العربیہ کی رپورٹ کے مطابق صدر براک اوباما اس میدان میں اپنے مدمقابل سے آگے نظر آتے ہیں۔

دنیا بھر میں اہل فن و ثقافت سیاست میں اہم کردار کرتے ہیں۔ سیاستدان بھی اپنے حمایتی مشہور فنکاروں کو اپنی عوامی مقبولیت کا گراف اور ووٹ بینک بڑھانے کے لئے استعمال کرتے ہیں۔ امریکا میں بھی فنکار اپنے من پسند صدارتی امیدوار کا سیاسی قد کاٹھ بڑھانے کے لئے سرگرداں ہیں۔

امریکی فلمی صنعت کے مرکز ہالی وڈ میں جہاں سیاسی موضوعات پر فلمیں بھی بنی ہیں، اب وہاں فلمی ستارے حالیہ صدارتی انتخاب میں اپنا اپنا سیاسی میلان کھلے عام ظاہر کرتے دکھائی دیتے ہیں۔

ڈیموکریٹ صدارتی امیدوار براک اوباما کو زیادہ فلمی ستاروں کی حمایت ملتی دکھائی دے رہی ہے، تاہم ہر فلمی اداکار یا اداکارہ اپنی اس حمایت کے اظہار کے لئے مختلف طریقے استعمال کر رہا ہے۔

معروف امریکی اداکار جارج کلونی اوباما کی صدارتی مہم میں بہت زیادہ متحرک نظر آئے۔ انہوں نے براک اوباما کی انتخابی مہم کے لئے بڑی بڑی فنڈ ریزنگ مہمات ترتیب دیں۔ ایسی ہی ایک تقریب انہوں نے اپنے گھر میں منعقد کی جس میں اطلاعات کے مطابق پندرہ ملین ڈالرز مالیت کے عطیات جمع ہوئے۔ اس 'سخاوت' کے جلو میں یہ کہنا بے جا نہیں کہ آنے والے دنوں میں صدر براک اوباما، جارج کلونی کو اپنا 'جگری دوست' قرار دے دیں۔

امریکی صدر براک اوباما مشہور گلوکارہ بیوآسنی اور ان کے شوہر کو بھی اپنے 'دوستوں' میں شمار کرتے ہیں۔ اس فنکار جوڑے نے براک اوباما کی مالی مدد کے لئے متعدد گالا ڈنر تربیت دیئے جہاں انہوں نے نے حاظرین کو اپنی ویڈیوز سے لبھایا۔

اوباما کے حمایتی بعض فنکاروں نے ان کی حمایت مالی طور پر کرنے کے بجائے، ان کے سیاسی حریف پر تنقید کی اور عوام پر زور دیا کہ وہ صدر براک اوباما کو دوسری مرتبہ امریکی کی قیادت کے منصب پر فائز کرانے میں کوئی کسر نہ چھوڑیں۔

متنازعہ امریکی فنکارہ میڈونا نے براک اوباما کے دوسری مرتبہ صدر منتخب ہونے پر سرعام بے لباس ہونے کی 'نوید' سنا کر صدارتی انتخاب کی سیاست میں اپنا حصہ ادا کیا۔ امریکی عوام کا ایک حلقہ ایسا بھی ہے کہ جو فنکاروں کی اکثریت کو ڈیموکریٹ کہتا ہے۔ ان فنکاروں کی نمائندگی کرتے ہوئے بعض امریکی اداکاروں نے مٹ رومنی کی حمایت کا بھی اعلان کیا ہے۔

تاہم فنکاروں کی صدارتی انتخاب کی سیاسی عمل میں شرکت کا یہ سب حیران کن واقعہ مشہور سیاہ فام راپ سنگر نکی میناج کی مٹ رومنی کی حمایت میں ایک نغمے کی صورت میں سامنے آیا جس میں انہوں نے براک اوباما کو 'سخت سست' کہا، تاہم انتخابی عمل سے چند دن پہلے انہوں نے اپنے ٹیوٹر پیغام میں رومنی حمایتی نغمے میں اوباما پر تنقید کو محض مذاق سے تعبیر کیا۔