ایران نے یورینیم افزودگی کی مقدار میں 20 فی صد کمی کر دی

عالمی طاقتوں سے مذاکرات میں کامیابی اور پابندی خاتمے کے لیے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

درایں اثناء ایران کی طاقتور مسلح افواج پاسداران انقلاب کے ذرائع نے یورینیم افزودگی کی مقدار میں کمی کے اعلان کی تردید کی ہے۔ نیم سرکاری خبر رساں ایجنسی 'فارس' نے پاسداران انقلاب کے ذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ تہران اب بھی یورینیم افزودگی کا عمل جاری رکھے ہوئے ہے۔ اخباری ذرائع کا یہ بھی کہنا ہے کہ پاسداران انقلاب یورینیم افزودگی میں کمی کے اعلان کے بارے میں دو حصوں میں تقسیم ہے۔

ادھر ایرانی دفتر خارجہ کے ترجمان مہمان پرست نے ہفتے کے روز 'فارس' نیوز ایجنسی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ان کے ملک نے سلامتی کونسل کے پانچ مستقل ارکان اور جرمنی سے مذاکرات کے دوران جوہری بحران کے حل کے لیے ٹھوس تجاویز دی ہیں۔ تاہم انہوں نے جوہری توانائی کے حصول سے دستبرداری کی کسی بھی تجویز کو مسترد کر دیا۔ ترجمان کا کہنا تھا کہ انہوں نے عالمی طاقتوں پر زور دیا ہے کہ وہ تہران کے ساتھ ہونے والی بات چیت کو براہ راست نشر کریں تاکہ ایران کے بارے میں عالمی سطح پر پائے جانے والے پروپیگنڈے کا ازالہ کیا جا سکے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں