.

وینس زیر آب آ گیا، سیاح تیر کر جانیں بچانے لگے

شدید بارشوں سے گلیوں و بازار میں ہر طرف پانی ہی پانی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اٹلی میں طوفانی بارشوں کے باعث معروف تاریخی ثقافتی اور سیاحتی شہر وینس کا بیشتر حصہ سیلاب کی نذر ہو گیا جس کی وجہ سے مقامی باشندوں اور غیر ملکی سیاحوں کو سخت مشکلات کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ ملک کے شمالی اور وسطی علاقوں میں ہونے والی بارشوں سے سیاح پھنس کر رہ گئے ہیں اور وینس میں پانی جمع ہونے سے شہر کے مکانات، تجارتی مراکز اور زیر آب آ گئے ہیں۔
خبر رساں ایجنسی رائیٹرز نے وینس حکام کے حوالے سے بتایا ہے کہ شدید بارشوں اور سیلاب کے باعث شہر کا 70 فی صد علاقہ غرب آب ہو چکا ہے۔ شہر میں جمع ہونے والے پانی کی سطح 149 سینٹی میٹر تک بلند ہو چکی ہے جو سنہ 1872ء کے بعد ایک نیا ریکارڈ ہے۔

حکام نے شہر میں ہونے والے مادی نقصان کا اندازہ لگانے کی کوشش کی ہے تاہم فی الحال اس کے حتمی اعداد و شمار سامنے نہیں آ سکے ہیں۔ پانی کی بڑی مقدار کے جمع ہونے کے باعث وینس آنے والے سیاح پیراکی کا لباس پہن کر شہر سے باہر نکلنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

یاد رہے کہ اطالوی حکومت نے تاریخی ثقافتی شہر کو بچانے کے لیے شہر کے آس پاس پانی ذخیرہ کرنے کے 78 چھوٹے ڈیم بنانے کے منصوبے پر غور کر رہی ہے تاہم اس پر کام دو سال بعد شروع ہو گا۔

اٹلی کی ایک دوسری ریاست ٹوسکانیہ میں حکام کا کہنا ہے کہ چار گھنٹوں کی موسلا دھار بارش کی وجہ سے 23 سینٹر میٹر پانی جمع ہو گیا۔ مسلسل بارش کے باعث دو نہروں میں طغیانی کی کیفیت ہے، جس کے بعد آس پاس موجود 200 افراد کو محفوظ مقامات پر منتقل کر دیا گیا ہے۔