محمد مراح کو والدین کی جہالت نے دہشت گرد بنا دیا

القاعدہ کے مقتول جنگجو کے بھائی کا خود نوشت میں انکشاف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
5 منٹس read

عبدالغنی کے والد نے مزید بتایا کہ "عبدالقادر مراح جب جیل میں تھا تو عبدالغنی نے ایک مرتبہ بھی اہل خانہ سے فون پر بھی رابطہ نہیں کیا اور نہ ہی وہ کبھی بھائی سے جیل میں ملنے گیا۔ آج وہ یہ دعویٰ کر رہا ہے کہ وہ خاندان کا ہمدرد وغمگسار ہے۔ اگر وہ واقعتاً ایسا ہی ہے تو بھائی محمد مراح کو دہشت گرد کیوں قرار دیتا ہے"؟

ایک سوال کے جواب میں عبدالغنی کے والد نے کہا کہ انہیں کتاب میں منشیات فروش قرار دیا جانا ایک 'سنگین مذاق' ہے۔ انہوں نے کہا کہ عبدالغنی کی بات پر یقین کرنے سے قبل آپ [العربیہ ڈاٹ نیٹ] کو میرے اہل خانہ اور دوسرے بیٹوں اور میری اہلیہ سے معلوم کرنا چاہیے تھا کہ جس نے پوری زندگی میرے ساتھ گذار دی ہے۔

الجیرین اسلامک فرنٹ سے تعلق کے الزام کے بارے میں انہوں نے کہا کہ عبدالغنی کے سوا میرا پورا خاندان اسلامی شریعت کا پابند ہے۔ کسی مسلمان کا پابند صوم و صلوۃ ہونا اس امر کی دلیل ہر گز نہیں ہوتا کہ ان کا تعلق کسی شدت پسند تنظیم سے ہے۔ ہمارا خاندان ایک متعدل دینی گھرانہ ہے جبکہ عبدالغنی ایک بد اخلاق شخص ہے جس کے ایک یہودی لڑکی کے ساتھ ناجائز مراسم بھی ثابت ہو چکے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں