.

سعودی عرب میں شراب کی مصنوعی جھیل کا انکشاف

جھیل میں 500 ٹن نشہ آٓور مواد شامل، 712 بوتلیں برآمد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
سعودی عرب کی مذہبی پولیس امر بالمعروف ونہی عن المنکر نے جنوبی شہر خمیس مشیط میں ایک ڈیم کے قریب شراب کی ایک مصنوعی جھیل کا سراغ لگایا ہے جس میں 500 ٹن نشہ آور مواد شامل کیا گیا ہے۔ حکام نے چھاپے کے دوران وہاں سے شراب کی 712 بوتلیں بھی قبضے میں لی ہیں،جن میں اس جھیل نُما تالاب سے شراب ڈال کر انہیں شہروں تک لے جانے کے لیے سٹور کر کے رکھا گیا تھا۔



العربیہ ٹی وی کے مطابق امر بالمعروف و نہی عن المنکر کے ضلعی ترجمان الشیخ عوض الاسمری نے بتایا کہ حکام نے ضلع خمیس مشیط میں معمول کے گشت کے دوران ایک ویران پہاڑی علاقے میں شراب کی اس 'جھیل' کا سراغ لگایا جسے بوتلوں اور کنستروں کے ذریعے شراب مختلف شہروں میں لے جانے کے لیے تیار کیا گیا تھا۔

ترجمان نے کہا کہ مصنوعی جھیل سے ایسے معلوم ہوتا ہے کہ اس کی تیاری میں چند افراد نہیں بلکہ ایک بڑا گروہ ملوث ہے، جو یہاں بڑی مقدار میں شراب کشید کرنے کے بعد اسے شہروں تک پہنچانے کا بھی اہتمام کرتا ہے۔ پولیس نے شراب کی جھیل اور وہاں سے ملنے والے دیگر سامان کو تحویل میں لے لیا ہے اور معاملے کی اعلیٰ سطح پر چھان بین شروع کر دی گئی ہے۔



ترجمان نے کہا کہ گوکہ ضلع خمیس المشیط میں کی اس جھیل میں تیار ہونے والی شراب زیادہ سخت نوعیت کی نہیں ہے البتہ بکثرت استعمال سے یہ لوگوں کے لیے مضر صحت ثابت ہو سکتی ہے۔ انہیں خدشہ ہے کہ اس جھیل سے مقامی سطح کے نوجوان بھی بڑی مقدار میں شراب لے جاتے رہے ہوں گے۔ انہوں نے کہا کہ شراب کی شرعی ممانعت اپنی جگہ لیکن انسانی صحت کے اعتبار سے بھی یہ ایک مکروہ چیز ہے۔



خیال رہے کہ سعودی عرب میں جہاں شراب کی تیاری، اس کے استعمال یا خرید و فروخت پر سخت پابندی ہے اور اس دھندے میں ملوث افراد کے لیے کڑی سزائیں مقرر ہیں۔ وہاں پر شراب کی ایک جھیل کا پایا جانا حیران کن ہے۔