.

سعودی فرمانروا شاہ عبداللہ سرجری کے بعد پہلی مرتبہ ٹی وی پر نمودار

ریاض میں شاہی خاندان کے ارکان سے ملاقات

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
سعودی عرب کے فرمانروا شاہ عبداللہ بن عبدالعزیز سترہ نومبر کو اپنی کمر کی سرجری کے بعد پہلی مرتبہ بدھ کو سرکاری ٹیلی ویژن پر نمودار ہوئے ہیں۔

سرکاری ٹی وی پر نشر کی گئی ایک ویڈیو کے مطابق شاہ عبداللہ کی صحت بہتر نظر آ رہی ہے اور وہ ریاض میں شاہی خاندان کے ارکان سے ملاقات کر رہے ہیں۔

واضح رہے کہ شاہ عبداللہ کا گذشتہ سال دسمبر میں نیویارک میں پہلی مرتبہ ریڑھ کی ہڈی کے مہروں کو جوڑنےکے لیے دوبار آپریشن کیا گیا تھا۔ تب سعودی عرب کی سرکاری خبر رساں ایجنسی 'ایس پی اے' نے اطلاع دی تھی کہ خادم الحرمین الشریفین کے حرام مغزمیں خون کا لوتھڑا جم گیا تھا جس کے بعدان کی سرجری کی گئی تھی لیکن اس کے باوجود تن درست نہیں ہوئے تھے۔

شاہ عبداللہ کی اس وقت عمر ستاسی یا اٹھاسی سال ہے۔ وہ 2005ء میں اپنے بھائی شاہ فہد کےانتقال کے بعد سعودی عرب کے فرمانروا بنے تھے اور وہ مملکت کے چھٹے حکمران ہیں۔ سعودی عرب دنیا کے خام تیل کے پانچویں حصے سے زیادہ کے ذخائر کا مالک ہے اور وہ تیل کا سب سے بڑا برآمد کنندہ ملک ہے۔ وہ خطے میں امریکا کا ایک اہم اتحادی اور ڈالرز کے سب سے زیادہ اثاثوں کا مالک ہے۔