.

افغانستان رشتہ سے انکار پر 15 سالہ لڑکی ذبح

دونوں قاتل گرفتار، پولیس کے زیرتفتیش

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
افغانستان میں ایک خاندان کی جانب سے رشتہ دینے سے انکار پر پندرہ سالہ لڑکی کو ذبح کرنے والے دو افراد کو گرفتار کر لیا ہے۔

نوجوان لڑکی کے قتل کا یہ واقعہ افغانستان کے شمالی صوبہ کندوز میں بدھ کو پیش آیا تھا۔ صوبے کے پولیس ترجمان سید سرورحسینی نے بتایا ہے کہ ''لڑکی ایک دریا سے پانی لے کر اپنے گاؤں کی جانب آرہی تھی۔اس دوران اس پر دو افراد نے حملہ کر دیا اور چاقو سے اسے ذبح کر دیا''۔

ترجمان نے مزید بتایا کہ ''ان دونوں ملزموں میں سے ایک نے لڑکی کا رشتہ مانگا تھا لیکن اس کے خاندان نے انکار کر دیا تھا۔ ان دونوں کو گرفتار کر لیا گیا ہے اور وہ پولیس کی حراست میں زیر تفتیش ہیں''۔

واضح رہے کہ افغانستان میں خواتین کے خلاف تشدد کے واقعات آئے دن پیش آتے رہتے ہیں۔ برطانوی امدادی ادارے آکسفیم کی ایک رپورٹ کے مطابق جنگ زدہ ملک کی ستاسی فی صد خواتین نے اپنے ساتھ جسمانی، نفسیاتی یا جنسی تشدد یا جبر کی شادی کی اطلاع دی تھی۔

گذشتہ ماہ مغربی صوبہ ہرات میں ایک بیس سالہ خاتون کو اس کے سسرالیوں نے مبینہ طور پر جسم فروشی سے انکار پر قتل کر دیا تھا۔ پولیس نے اسے وحشیانہ انداز میں قتل کرنے کے جُرم میں چار افراد کو گرفتار کر لیا تھا۔

ستمبر میں صوبہ غزنی میں پانچ افراد کو ایک سولہ سالہ لڑکی کو ناجائز تعلقات کے جرم میں کوڑے مارنے پر گرفتار کر لیا تھا۔ اس لڑکی کو گاؤں کے بڑوں اور اس کے خاندان کے سامنے ایک سو کوڑے مارے گئے تھے جبکہ اس کے مبینہ بوائے فرینڈ کو صرف جرمانہ کر کے چھوڑ دیا گیا تھا۔