.

شام کے 700 میزائلوں کے تمام ٹھکانے جانتے ہیں ترکی

"میزائل انتقاماً انقرہ کے خلاف استعمال ہو سکتے ہیں"

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
تُرک وزیر خارجہ احمد داؤد اوگلو نے کہا ہے کہ شام کے پاس زمین سے زمین پر مار کرنے والے 700 میزائل موجود ہیں، ہمیں ان کے ٹھکانوں کا علم ہے۔ ہم یقینی طور پر جانتے ہیں کہ یہ میزائل کہاں کہاں اور کیسے ذخیرہ کیا گئے ہیں اور ان کی نگرانی پر کون مامور ہے؟۔

ان خیالات کا اظہار ترک وزیر خارجہ نے برسلز میں معاہدہ شمالی اوقیانوس کی تنظیم کے خصوصی اجلاس کے بعد وطن واپسی پر اخبار 'الصباح' سے گفتگو میں کیا۔ انہوں نے کہا کہ انقرہ نے اجلاس میں 28 رکنی نیٹو تنظیم سے ترکی کی شام سے ملحقہ سرحد پر زمین سے فضاء میں مار کرنے والے میزائل لگانے کی اجازت مانگی ہے۔

ایک سوال کے جواب میں احمد داؤد اوگلو کا کہنا تھا کہ عالمی برادری کو خدشہ ہے کہ بشار الاسد سے استعفیٰ کا مطالبہ کرنے والے پڑوسی ملکوں، بالخصوص ترکی، کے خلاف یہ میزائل استعمال ہو سکتے ہیں کیونکہ بشار الاسد اقتدار چھوڑنے سے قبل کسی بھی قسم کی انتقامی کارروائی کر سکتے ہیں۔ اسی خطرے کے پیش نظر ترکی نے اپنی سرحد کے ساتھ پیٹریاٹ میزائل نصب کیے ہیں۔

خیال رہے کہ شام کے پاس زمین سے زمین پر مار کرنے والے روسی ساختہ ’’اسکڈ‘‘ میزائلوں کے علاوہ سیکڑوں کی تعداد میں دوسرے میزائل بھی موجود ہیں۔ موجودہ حالات میں پڑوسی ملک انہیں اپنے لیے خطرہ سمجھتے رہے ہیں۔