.

ایران کی میزائل لانچنگ کے لیے شمالی کوریا کو فنی امداد

تہران ۔ پیانگ یانگ میزائل ٹکنالوجی تعاون 80 کی دہائی سے جاری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
ایران سے تعلق رکھنے والے میزائل ماہرین ان دنوں شمالی کوریا میں موجود ہیں جہاں وہ پیانگ یانگ کو ایک میزائل تجربے میں ٹیکنیکل مدد فراہم کریں گے۔ یہ میزائل تجربہ آیندہ چند دنوں میں کیا جانا تھا لیکن اب اس میں بعض وجوہ کی بنا پر تاخیر کر دی گئی ہے۔

جنوبی کوریا کے اخبار 'چوژن ایلبو' نے سرکاری ذرائع کے حوالے سے بتایا کہ میزائل لانچنگ پیڈ اور اس کے قریب واقع ایک عمارت کے درمیان ایک گاڑی کی بکثرت نقل و حرکت دیکھی گئی ہے، بادی النظر میں اسی گاڑی میں ایرانی ماہرین کو لانچنگ پیڈ تک لےجایا جاتا ہے۔'

نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر ذرائع نے بتایا کہ شمالی کوریا اور ایران کے درمیان میزائل ڈیویلپمنٹ کے میدان میں تعاون اسی کی دہائی سے جاری ہے، حالیہ دنوں میں یہ تعاون وسعت پا چکا ہے۔' اخبار کے مطابق شمالی کوریا نے اپریل میں میزائل لانچنگ میں ناکامی کے بعد اب ایرانی ماہرین کو مدد کے لیے بلوایا ہے۔

لانچنگ میں تاخیر

اتوار کے روز پیانگ یانگ نے بتایا کہ میزائل کی لانچنگ اسی ماہ ہونا تھی لیکن اسے سابق آنجہانی صدر کی برسی کی وجہ سے مؤخر کیا جا سکتا ہے۔ تجزیہ کاروں نے اس امکان کو مسترد کیا ہے کہ میزائل لانچنگ میں تاخیر بیرونی دباؤ کا نتیجہ ہے۔

شمالی کوریا کی سپیس ٹکنالوجی نے ایک بیان بتایا کہ ہم میزائل لانچنگ تجربے کے آخری مراحل میں ہیں، تاہم تیاریوں کے دوران چند مشکلات سامنے آئیں جس کے باعث ہمارے سائنسدانوں اور انجینئرز لانچنگ کا وقت تبدیل کرنے پر مجبور ہوئے۔ بیان میں تاخیر یا پری لانچ مشکلات کی مزید تفصیل نہیں بتائی گئی ہے۔