.

امریکا اسکول میں فائرنگ، طلبہ واساتذہ سمیت 27 ہلاک

حملہ آور نوجوان کو موقع پر ہلاک کر دیا گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی ریاست کونکٹی کٹ کے شہر نیو ٹاؤن میں ایک ایلمینٹری اسکول میں مسلح شخص کی فائرنگ سے اٹھارہ بچوں سمیت ستائیس افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔

فائرنگ کا یہ واقعہ جمعہ کی صبح [امریکا کے معیاری وقت کے مطابق] سینڈی ہُک ایلیمنٹری اسکول میں پیش آیا ہے۔ اس اسکول میں پانچ سے دس عمر کے بچوں کو کنڈر گارٹن سے چوتھی جماعت تک تعلیم دی جاتی ہے۔ سی این این کی رپورٹ کے مطابق اسکول کا پرنسپل اور ماہر نفسیات بھی مقتولین میں شامل ہے۔

این بی سی نیوز چینل نے کسی ذریعے کا حوالہ دیے بغیر اطلاع دی ہے کہ فائرنگ کرنے والا شخص بالغ تھا اور اس کو ہلاک کر دیا گیا ہے۔ اس کے قبضے سے دو بندوقیں برآمد ہوئی ہیں۔

اے بی سی نیوز نے ریاستی اور وفاقی ذرائع کے حوالے سے بتایا کہ اسکول میں فائرنگ کرنے والے مسلح نوجوان کی شناخت ہو گئی ہے۔ اس کا نام ریان لانزا تھا اور اس کی عمر چوبیس سال تھی۔ وہ نیوجرسی سے تعلق رکھتا تھا۔ اس نے اسکول میں فائرنگ کر کے اپنی والدہ کو بھی ہلاک کر دیا ہے۔

حکام کے مطابق اسکول میں اس کی فائرنگ کا نشانہ بننے والوں کے علاوہ اس کے گھر سے بھی ایک لاش ملی ہے۔ فوری طور پر یہ معلوم نہیں ہو سکا کہ اس نے خون کی یہ ہولی کیوں کھیلی ہے لیکن وہ اسکول میں فائرنگ کے لیے مکمل تیاری کرکے آیا تھا۔ اس کے پاس چار ہتھیار تھے اور اس نے بلٹ پروف جیکٹ پہن رکھی تھی۔ کونیکٹی کٹ کے پولیس ترجمان لیفٹیننٹ پال وینس نے نیوز کانفرنس میں بتایا کہ اس قاتل کو اسکول کی عمارت کے اندر ہی ہلاک کر دیا گیا ہے لہٰذا عوام خطرے میں نہیں ہیں۔

ایک اور امریکی نشریاتی ادارے سی بی ایس کی رپورٹ کے مطابق اس واقعہ میں ایک اور بندوق بردار بھی ملوث تھا لیکن اس کی تصدیق نہیں ہو سکی۔ فائرنگ کے بعد اسکول میں افراتفری پھیل گئی اور والدین واقعہ کی اطلاع ملتے ہی اپنے بچوں کو لینے کے لیے اسکول پہنچ گئے۔ اسکول کی بعض معلمات نے فائرنگ شروع ہوتے ہی اپنی جماعتوں کے کمروں کے دروازے اندر سے بند کر لیے تھے جس کی وجہ سے وہ خود اور ان کے طلبہ محفوظ رہے ہیں۔

نیو ٹاؤن میں فائرنگ کے اس واقعہ کے بعد شہر کے تمام اسکولوں کی تالا بندی کر دی گئی ہے۔ امریکا میں حالیہ برسوں کے دوران فائرنگ کے کسی واقعہ میں یہ سب سے زیادہ ہلاکتیں ہیں اور جانی نقصان کے اعتبار سے امریکی تاریخ کا بھی یہ سب سے بڑا واقعہ ہے۔ چند ماہ قبل نیویارک میں تاریخی ایمپائر اسٹیٹ بلڈنگ کے باہر ایک مسلح شخص نے فائرنگ کر دی تھی جس کے نتیجے میں دو افراد ہلاک اور آٹھ زخمی ہو گئے تھے۔

اس سے پہلے بیس جولائی کو چوبیس سالہ جیمز ہولمز نامی حملہ آور نے آرورا، کولوراڈو میں فلم ''دا ڈارک نائٹ رائزز'' کے پریمیئر شو کے موقع پر فائرنگ کر دی تھی۔ اس واقعہ میں بارہ افراد ہلاک اور اٹھاون زخمی ہو گئے تھے۔ پانچ اگست کو ملووکی میں سکھوں کے ایک گوردوارے پر ایک مسلح شخص کی فائرنگ سے چھَے افراد ہلاک ہو گئے تھے۔ بعد میں پولیس نے حملہ آور کو ہلاک کر دیا تھا۔