.

امریکا کا جہاد مقدسی کے فرار میں کردار کی تصدیق سے انکار

شامی ترجمان واشنگٹن میں سی آئی اے کے زیرتفیش

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
امریکا نے شامی وزارت خارجہ کے سابق ترجمان جہاد مقدسی کے دمشق سے واشنگٹن تک فرار میں اپنی خفیہ ایجنسی سی آئی اے کے کردار سے متعلق رپورٹس کی تصدیق یا تردید سے انکار کیا ہے۔

لندن سے شائع ہونے والے عربی روزنامے الشرق الاوسط کی ایک رپورٹ کے مطابق امریکی محکمہ خارجہ کے ایک عہدے دار نے اپنی شناخت ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ ''محکمہ خارجہ کو جہاد مقدسی کے اتا پتا کے بارے میں کوئی اطلاع نہیں ہے''۔

اخبار نے شامی حزب اختلاف کے ایک کارکن رامی جراح کے ساتھ ٹویٹر پرجہاد مقدسی کی گفتگو بھی شائع کی ہے۔ اکیس جولائی کو ہونے والی اس گفتگو میں جہاد مقدسی نے کہا تھا کہ ''صدر بشارالاسد کی حکومت جرائم پیشہ ہے اور شامی عوام کے خلاف ہے''۔ اس گفتگو میں انھوں نے پیشین گوئی کی تھی کہ اسد رجیم کا بہت جلد دھڑن تختہ ہو جائے گا۔تاہم ان کی نظر میں حزب اختلاف کا کوئی ایسا دھڑا موجود نہیں ہے جو صدر بشار الاسد کی جگہ لے سکے۔

اس کارکن نے الشرق الاوسط سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ''جہاد مقدسی ایک سفارت کار ہیں اور وہ امریکا سمیت دوسروں کے ساتھ تعلقات استوار کر سکتے ہیں''۔ اس سے قبل سوموار کو برطانوی روزنامے گارجین نے اطلاع دی تھی کہ شامی وزارت خارجہ کے سابق ترجمان امریکا میں ہیں اور وہ امریکیوں کے ساتھ (تفتیش کے عمل میں) تعاون کررہے ہیں۔

برطانوی اخبار میں شائع ہونے والی رپورٹ کے مطابق امریکی انٹیلی جنس حکام نے انھیں بیروت سے واشنگٹن فرار میں مدد دی تھی۔ وہ قریباً ایک ماہ قبل دمشق سے بیروت اور وہاں سے واشنگٹن چلے گئے تھے۔

جہاد مقدسی کے بارے میں چند روز قبل یہ اطلاع بھی سامنے آئی تھی کہ انھیں لبنان کی شیعہ ملیشیا حزب اللہ نے بیروت پہنچنے کے بعد اغوا کر لیا تھا اور انھیں مبینہ طور پر شامی حکومت کے حوالے کردیا تھا لیکن ان کے حوالے سے دمشق حکومت کی جانب سے حال ہی میں بیانات میں کہا گیا ہے کہ وہ تین ماہ کی رخصت پر ہیں۔

واضح رہے کہ جہاد مقدسی کے لبنان کے دارالحکومت بیروت میں غائب ہونے کے چار روز بعد تین دسمبر کو حزب اللہ کے المنار ٹیلی ویژن اسٹیشن نے یہ اطلاع دی تھی کہ انھیں حکومت کے موقف کے منافی بیانات جاری کرنے پر برطرف کر دیا گیا ہے۔

ان کے قریبی ذرائع کے حوالے سے تب یہ اطلاع سامنے آئی تھی کہ وہ دمشق سے بیروت چلے گئے ہیں جہاں سے وہ لندن جائیں گے اور وہاں نیوز کانفرنس سے خطاب کریں گے لیکن ان کے بیروت پہنچنے کا تو سراغ ملا تھا،اس کے بعد وہ کہاں چلے گئے،اس کی کوئی مصدقہ اطلاع سامنے نہیں آئی تھی۔