.

سعودی عرب کی تاریخ کا سب سے بڑا بجٹ منظور

بجٹ کی مالیت 829 ریال ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
سعودی عرب کے فرمانروا خادم الحرمین الشریفین عبداللہ بن عبدالعزیز آل سعود نے کابینہ کے اجلاس میں مملکت کی تاریخ کے سب سے بڑے بجٹ کی منظوری دی۔ سن 2013ء کی بجٹ تجاویز میں پیدواری اخراجات میں اضافہ کیا گیا ہے۔

العربیہ ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق پیداواری اخراجات کی مد میں امسال 218 ارب ڈالر خرچ کئے جائیں گے۔ اس طرح امسال نو ملین ریال کا سرپلس بجٹ منظور کیا گیا ہے۔

سال 2013ء کے میزانیے میں آمدنی کا تخمینہ 1236 ارب ریال ہے جبکہ اخراجات 853 ارب ریال ہوں گے۔ اس لحاظ سے موجودہ بجٹ سرپلس بجٹ ہو گا۔

اس سال بجٹ میں صحت، سماجی بہبود اور ٹرانسپورٹ کے شعبہ جات کے بجٹ میں 16 فیصد جبکہ تعلیم کے شعبے کے بجٹ میں 25 فیصد اضافہ کیا گیا ہے۔

میونسپل سروسز کے بجٹ میں 23 فیصد اضافہ کیا گیا ہے جس کے بعد اس شعبے کا بجٹ 36 ارب ریال ہو جائے گا جبکہ بنیادی ڈھانچے کی مد میں 65 ارب ریال مختص کئے گئے ہیں، جو گزشتہ برس کے میزاںیے کے حوالے سے سولہ فیصد زیادہ ہیں۔

پانی، زراعت، صنعت اور دیگر اقتصادی شعبوں کے لئے امسال گیارہ فیصد کی شرح سے اضافے کے ساتھ 57 ارب ریال مالیت کا بجٹ مختص کیا گیا ہے۔