.

سارکوزی پر معمر قذافی سے پانچ کروڑ یورو وصول کرنے کا الزام

مقتول لیبی صدر سے وصول کردہ رقم انتخابی مہم پر خرچ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
فرانس کے ایک جج کو بتایا گیا ہے کہ سابق صدر نیکولا سارکوزی نے لیبیا کے مقتول صدر معمر قذافی سے پانچ کرورڑ یورو سے زیادہ رقم وصول کی تھی۔

لبنان سے تعلق رکھنے والی ایک کاروباری شخصیت زیاد تقی الدین نے فرانس کے ایک تفتتیشی جج کو بتایا ہے کہ کرنل قذافی اور ان کے ایک بیٹے نے غیر قانونی طور پر نیکولا سارکوزی کو پانچ کرورڑ یورو سے زیادہ رقم منتقل کی تھی اور ان کے پاس اس کے تحریری ثبوت موجود ہیں۔

برطانوی روزنامے انڈی پینڈنٹ میں جمعرات کو شائع شدہ رپورٹ کے مطابق نیکولا سارکوزی نے 2006ء اور 2007ء میں اس رقم سے فرانس کا پہلی مرتبہ صدر منتخب ہونے کے لیے انتخابی مہم چلائی تھی اور ان پر بعد میں بھی طرابلس کی نوازشات کا سلسلہ جاری رہا تھا۔

سابق فرانسیسی صدر پر لیبیا کے مقتول صدر سے رقوم وصول کرنے سے متعلق الزامات کی اس سے پہلے اپریل 2012ء میں صدارتی انتخاب کے لیے مہم کے دوران صدائے بازگشت سنی گئی تھی لیکن سارکوزی کی اس وقت انتخابی مہم کی ترجمان نیتھالئی کوسیکیوسکو مورزیت نے اس الزام کو مسترد کر دیا ہے۔

خاتون ترجمان نے فرانسیسی خبر رساں ادارے 'اے ایف پی' کو بھیجی گئی ایک ای میل میں لکھا ہے کہ سارکوزی کی انتخابی مہم کے لیے فنڈز کو ملک کی آئینی کونسل نے ان کے انتخاب کے بعد کلئیر کر دیا تھا۔ انھوں نے سارکوزی پر ان الزامات کو موجودہ صدر فرانسو اولاند کے کیمپ کا کیا دھرا قرار دیا ہے۔

ایک ویب سائٹ میڈیا پارٹ نے سن 2006ء میں لکھی ایک عربی دستاویز جاری کی ہے۔ اس پر کرنل قذافی کے بیرونی انٹیلی جنس ادارے کے سربراہ موسیٰ قوسا کے دستخط ہیں۔ اس میں فرانس کے صدارتی انتخابات کے لیے امیدوار نیکولا سارکوزی کی اصولی طور پر پانچ کروڑ یورو کی رقم سے امداد سے اتفاق کیا گیا تھا۔

بائیں بازو سے تعلق رکھنے والی اس تحقیقاتی ویب سائٹ نے گذشتہ سال بارہ مارچ کو بھی ایک رپورٹ جاری کی تھی اور اس میں فرانس کے اسلحہ کے ایک ڈالر کے سابق ڈاکٹر کا حلفیہ بیان شامل کیا گیا تھا۔ اس میں اس نے کہا تھا کہ اس نے 2007ء میں سابق صدرسارکوزی کی انتخابی مہم کے لیے عطیات کا بندوبست کیا تھا لیکن سارکوزی نے اس رپورٹ کو مضحکہ خیز قرار دے کر مسترد کر دیا تھا۔